Book Name:Wasail e Bakhshish

خدایا اجل([1])آکے سر پر کھڑی ہے              دِکھا جلوئہ مصطَفٰے یاالٰہی

مری لاش سے سانپ بچّھو نہ لپٹیں              کرم از طفیل رضا یاالٰہی

تو عطارؔ کو سبز گنبد کے سائے میں

کردے شہادت عطا یاالٰہی

مجھے  بخش دے بے سبب یا الٰہی

(یہ کلام۷ ربیع الآخر۱۴۳۲ھ کو موزوں   کیا)

مجھے بخش دے بے سبب یا الٰہی               نہ کرنا کبھی بھی غضب یاالٰہی

گناہوں   نے ہائے! کہیں   کا  نہ چھوڑا          میں   کب تک پھروں   خوار اب یا الٰہی

پئے شاہِ بطحا مِری چھوٹ جائیں               بُری عادتیں   سب کی سب یاالٰہی

بڑا حج پہ آنے کو جی چاہتا ہے                            بُلاوا اب آ ئیگا کب یاالٰہی

میں   مکّے میں   آؤں   مدینے میں   آؤں                          بنا کوئی ایسا سبب یاالٰہی

میں   دیکھوں    مدینے کا گلشن دکھا دے                تُو دَشت([2]) و جِبالِ([3])عَرب یاالٰہی

کرم ایسا کر دے مدینے میں   آ کر                      گزاروں   میں   پھر روز و شب یا الٰہی

دکھا دے بہارِ مدینہ دکھا دے                         پئے تاجدارِ عرب یاالٰہی

سلیقہ شِعاری([4])کا میں   ہوں   بھکاری           مٹے خُوئے شَور و شَغَب([5])یاالٰہی

ملے بیقراری کروں   آہ وزاری                ترے خوف سے پیارے رب یا الٰہی

کروں   عالموں   کی کبھی بھی نہ توہین          بنا دے  مجھے باادب یاالٰہی

حُسین ابنِ حیدر کے صدقے میں   مولیٰ             ٹلیں   آفتیں   میری سب یاالٰہی

زمانے کی فکروں   سے آزاد کر دے         مٹا غم عطا کر طَرَب([6])یاالٰہی

جو مانگا وہ دے مجھ کو وہ بھی عطا کر           نہیں   کر سکا جو طَلب یاالٰہی

مسلماں   مسلمان کے خوں   کا پیاسا            ہوا وقت آیا عجب یاالٰہی

 



[1]     موت

[2]     میدان ۔جنگل

[3]     جبل کی جمع۔ پہاڑ۔

[4]     تمیز داری۔

[5]     شور و غل۔

[6]     خوشی۔



Total Pages: 406

Go To