Book Name:Wasail e Bakhshish

مَحبَّت میں   اپنی گُما یا الٰہی

محبت میں   اپنی گُما یاالٰہی                       نہ پاؤں   میں   اپنا پتا یاالٰہی

رہوں   مست وبے خود میں   تیری وِلا میں            پِلا جام ایسا پِلا یاالٰہی

میں   بے کار باتوں   سے بچ کے ہمیشہ کروں   تیری حمدوثنا یاالٰہی

مِرے اَشک بہتے رہیں   کاش ہر دم           ترے خوف سے یاخدا یاالٰہی

ترے خوف سے تیرے ڈر سے ہمیشہ       میں   تھرتھر رہوں   کانپتا یاالٰہی

مِرے دل سے دنیا کی چاہت مٹا کر           کر اُلفت میں   اپنی فنا یاالٰہی

تُو اپنی وِلایت کی خیرات دیدے                    مرے غوث کا واسِطہ یاالٰہی

گناہوں   نے میری کمر توڑ ڈالی                        مِرا حشْر میں   ہوگا کیا یاالٰہی

گناہوں   کے امراض سے نیم جاں   ہوں                 پئے مُرشِدی دے شِفا یاالٰہی

بنادے مجھے نیک نیکوں   کا صَدقہ                    گناہوں   سے ہردم بچا یاالٰہی

مِرا ہر عمل بس ترے واسطے ہو                     کر اِخلاص ایسا عطا یاالٰہی

عبادت میں   گزرے مری زندگانی                 کرم ہو کرم یاخدا یاالٰہی

مسلماں   ہے عطارؔ تیری عطا سے                ہو ایمان پر خاتِمہ یاالٰہی

 

میں   مکّے میں   پھر آگیا یا الٰہی

میں   مکّے میں   پھر آگیا یاالٰہی              کرم کا ترے شکریہ یاالٰہی

نہ کر رَد کوئی اِلتجا یاالٰہی ہو                  مقبول ہر اِک دُعا یاالٰہی

رہے ذِکر آٹھوں   پَہَر میرے لب پر                  تِرا یاالٰہی تِرا یاالٰہی

مِری زندگی بس تری بندگی میں        ہی اے کاش گزرے سدا یاالٰہی

نہ ہوں   اَشک برباد دنیا کے غم میں              محمد کے غم میں   رُلا یاالٰہی

عطا کردے اِخلاص کی مجھ کو نعمت              نہ نزدیک آئے ریا یاالٰہی

مجھے  اولیا  کی مَحبَّت  عطا کر                         تُو دیوانہ کر غوث کا یاالٰہی

میں   یادِ نبی میں   رہوں   گم ہمیشہ                              مجھے اُن کے غم میں   گُھلا یاالٰہی

مِرے بال بچوں   پہ سارے قبیلے                 پہ رَحمت ہو تیری سدا یاالٰہی

دے عطّاریوں   بلکہ سب سُنّیوں   کو              مدینے کا غم یاخدا یاالٰہی

 



Total Pages: 406

Go To