Book Name:Wasail e Bakhshish

کرم ہو دعوتِ اسلامی والوں   پرکرم مولیٰ

زمانے کے مصائب نے الٰہی گھیر رکھا ہے

پئے شاہِ مدینہ دور ہوں   رنج و اَلَم مولیٰ

رسولِ پاک کی دکھیاری امّت پرعنایت کر

مریضوں   ، غمزدوں   ، آفت نصیبوں   پر کرم مولیٰ

پئے شاہِ مدینہ اب مُشرَّف حج سے فرما دے

چلے عطّارؔ پھر روتا ہوا سُوئے حرم مولیٰ

 

گناہوں   سے مجھ کو بچا یاالٰہی!

یہ اَشعار اور اس کے بعد والے تمام وہ کلام جن میں   ’’ عطا، گما، گیا وغیرہ‘‘ قافیہ اور’’یا الٰہی‘‘ ردیف ہے، سفرِ مدینہ  ۱۴۲۱ ؁ھ میں   عرض کرنے کی سعاد ت حاصل ہوئی۔

گناہوں   سے مجھ کو بچا یاالٰہی     بُری عادتیں   بھی چُھڑا یاالٰہی

خطاؤں   کو میری مٹا یاالٰہی        مجھے نیک خَصلت بنا یاالٰہی

مُطِیع([1])اپنا مجھ کو بنا یاالٰہی                 سدا سُنّتوں   پر چلا یاالٰہی

تجھے واسِطہ سارے نَبیوں   کا مولیٰ        مِری بَخش دے ہر خطا یاالٰہی

غمِ مصطَفٰے دے غمِ مصطَفٰے دے        ہو دَردِ مدینہ عطا یاالٰہی

میں   عشقِ نبی میں   رہوں   گُم ہمیشہ       تُو دیوانہ ایسا بنا یاالٰہی

مدینے کی مستی رہے مجھ پہ چھائی       سدا یاالٰہی سدا یاالٰہی

دِکھا ہر برس تُو حرم کی بہاریں          تو مکّہ مدینہ دکھا یاالٰہی

شَرَف ہر برس حج کا پاؤں   خدایا                 چلے طَیبہ پھر قافِلہ یاالٰہی

جو روتے ہیں   ہجرِ مدینہ میں   اُنکو          مدینے کی گلیاں   دکھا یاالٰہی

زَبان اور آنکھوں   کا قُفلِ مدینہ          عطا ہو پئے مصطَفٰے یاالٰہی

تُو مرشد کے صدقے دِوانہ بنا دے       شَہَنْشاہِ بغداد کا یاالٰہی

مجھے  سُنِّیَتپر تُو دے استِقامت         پئے شاہِ احمدرضا یاالٰہی

تُو اَنگریزی فیشن سے ہردم بچا کر       مجھے سنّتوں   پر چلا یاالٰہی

مُطِیع اپنے مُرشِد کا مجھ کو بنادے      میں   ہو جاؤں   ان پر فِدا یاالٰہی

مُطِیع اپنے ماں   باپ کا کر میں   انکا       ہر اِک حکم لاؤں   بجا یاالٰہی

 



[1]     فرماں   بردار



Total Pages: 406

Go To