Book Name:Wasail e Bakhshish

 

تو ڈراپنا عنایت کر رہیں   اس ڈر سے آنکھیں   تر

مٹا خوفِ جہاں   دل سے مٹا دنیا کا غم مولیٰ

تُو بس رہنا سدا راضی، نہیں   ہے تابِ ناراضی

تو نا خوش جس سے ہو برباد ہے تیری قسم مولیٰ

چلوں   دنیا سے میں   اس شان سے اے کاش! یااللہ

شہِ اَبرار کی چوکھٹ پہ سر ہو میرا خم مولیٰ

سنہری جالیوں   کے سامنے اے کاش! ایسا ہو

نکل جائے رسولِ پاک کے جلووں   میں  دم مولیٰ

عطا کر عافیت تو نَزْع و قَبْر وحَشْر میں   یارب

وسیلہ فاطِمہ زَہرا کا کر لطف و کرم مولیٰ

الٰہی پُلْ صراط اِک پَل کے اندر پارکرجاؤں 

تو کر ایسی عنایت از پئے شاہِ حرم مولیٰ

میں   رحمت ، مغفِرت ، دوزخ سے آزادی کاسائل ہوں 

مہِ رمضان کے صدقے میں   فرمادے کرم مولیٰ

بَراءَ ت دے عذابِ قبر سے نارِ جہنَّم سے

مہِ شعبان کے صدقے میں   کر فضل و کرم مولیٰ

عبادت میں  ، ریاضت میں  ، تلاوت میں   لگا دے دل

رجب کا واسِطہ دیتاہوں   فرما دے کرم مولیٰ

 

بنا مجھ کو محمد مصطَفٰے کا عاشِقِ صادِق

تُو دیدے سوزِ سینہ کر عنایت چشمِ نَم مولیٰ

نہیں   درکار وہ خوشیاں  ، جو غفلت کا بنیں   ساماں 

عطا کر اپنی الفت اپنے پیارے کا تُو غم مولیٰ

غمِ عشقِ نبی ایسا عطا فرماپئے مرشد

ہو نعتِ مصطَفٰے سنتے ہی میری آنکھ نَم مولیٰ

بچیں   بے کار باتوں   سے پڑھیں   اے کاش کثرت سے

ترے محبوب پر ہر دم دُرُودِ پاک ہم مولیٰ

ہماری فالتو باتوں   کی عادت دُور ہو جائے

لگائیں   مُستقل قفلِ مدینہ لب پہ ہم مولیٰ

جسے نیکی کی دعوت دوں   اُسے دیدے ہدایت تُو

زُباں   میں  دے اثر کردے عطا زورِ قلم مولیٰ

الٰہی ہر مبلِّغ پیکرِ اِخلاص بن جائے

 



Total Pages: 406

Go To