Book Name:Wasail e Bakhshish

واسِطہ نورِ محمد کا تجھے پیارے خُدا                           گورِ تیرہ کر مُنوَّر بیکس و مجبور کی

آپ کے میٹھے مدینے میں   پئے غوث و رضا      حاضِری ہو یانبی! ہر بیکس و مجبور کی

آمِنہ کے لال! صَدقہ فاطِمہ کے لال کا                      دُور شامِ رنج و غم کر بیکس و مجبور کی

نفس و شیطاں   غالِب آئے لو خَبر اَب جَلد تر    یارسولَ اللّٰہ! آ کر  بیکس   و   مجبور  کی

کہتے رہتے ہیں   دعا کے واسطے بندے تِرے      کردے پوری آرزو ہر بیکس و مجبور کی

جس کسی نے بھی دعا کے واسطے یا رب! کہا       کردے پوری آرزو ہر بیکس و مجبور کی

بَہرِ خاکِ  کربلا ہَوں   دُور آفات و بلا                         اے حبیبِ ربِّ داوَر! بیکس و مجبور کی

آپ خود تشریف لائے اپنے بیکس کی طرف   ’’آہ‘‘جب نکلی تڑپ کر بیکس و مجبور کی

اے مدینے کے مسافر! تُو وہاں   غم کی کتھا ([1])             اُن سے کہنا خوب رو کر بیکس و مجبور کی

ہُوک اُٹّھی، رُوح تڑپی، جب مدینہ چھُٹ گیا                 جان تھی غمگین و مُضطَر بیکس و مجبور کی

آپ کے قدموں   میں   گِر کر موت کی یامصطفی آرزو کب آئے گی بَر، بیکس و مجبور کی

نامۂ عطارؔ میں   حُسنِ عمل کوئی نہیں

لاج رکھنا روزِ مَحشر بیکس و مجبور کی

گناہوں   کی نحو ست بڑھ رہی ہے دم بدم مولیٰ

                        (۲۵ ذوالحِجّۃ الحرام ۱۴۳۴ھ)

گناہوں   کی نحوست بڑھ رہی ہے دم بدم مولیٰ

میں   توبہ پر نہیں   رہ پارہا ثابِت قدم مولیٰ

کمر توڑی ہے عصیاں   نے، دبایا نفس و شیطاں   نے

نہ کرنا حشر میں   رُسوا، مِرا رکھنا بھرم مولیٰ

گناہوں  نے مجھے ہائے! کہیں   کا بھی نہیں   چھوڑا

کرم ہو از طفیلِ سیِّدِ عَرب و عجم مولیٰ!

اندھیری قبر کا احساس ہے پھر بھی نہیں  جاتیں 

گناہوں   کی خدایا عادتیں  ، فرما کرم مولیٰ

نہ کرنا حَشْر میں   پُرسِش مری ہوبے سبب بخشش

عطا کر باٖغِ فردوس از پئے شاہِ اُمَم مولیٰ

گنہ کرتے ہوئے گر مر گیا تو کیاکروں   گا میں 

بنے گا ہائے میرا کیا کرم فرما کرم مولیٰ

خِرَد کرتی نہیں   اب کام الٰہی! میں  ہوا ناکام

تجھی سے التجا ہے مجھ پہ کر رَحم و کرم مولیٰ

مسلماں   ہوں   اگر چہ بد ہوں   ، سچّے دل سے کرتاہوں   

ترے ہرحکم کے آگے سرِ تسلیم خم مولیٰ

 



[1]     کہانی۔افسانہ۔بات



Total Pages: 406

Go To