Book Name:Wasail e Bakhshish

اے بھائی! زَباں   پر تو لگا قفلِ مدینہ

آقا کی حیا سے جھکی رہتی نظر اکثر  ([1])

آنکھوں   پہ مرے بھائی لگا قفلِ مدینہ

 

گر دیکھے گا فلمیں   تو قیامت میں   پھنسے گا

آنکھوں   پہ مرے بھائی لگا قفلِ مدینہ

آنکھوں   میں   سرِحَشْر نہ بھر جا ئے کہیں   آگ

آنکھوں   پہ مرے بھائی لگا قفلِ مدینہ

بولوں   نہ فُضول اور رہیں   نیچی نگاہیں 

آنکھوں   کا زَباں   کا دے خدا قفلِ مدینہ

 آئیں   نہ مجھے وسوسے اور گندے خیالات

دے ذہن کا اور دل کا خدا قفلِ مدینہ

رفتار کا گُفتار کا کردار کا دے دے

ہر عُضو کا دے مجھ کو خدا قفلِ مدینہ

دوزخ کی کہاں   تاب ہے کمزور بدن میں 

                                            ہر عُضو       کا       عطارؔ لگا       قفلِ مدینہ

 

ہر خطا تو دَرگزر کر بیکس و مجبور کی

ہر خطا تو دَرگزر کر بیکس و مجبور کی               ہو الٰہی! مغفِرت ہر بیکس و مجبور کی

یاالٰہی! کردے پوری اَزپئے غوث و رضا                    آرزُوئے دیدِ سروَر بیکس و مجبور کی

زندگی اور موت کی ہے یاالٰہی کشمکش                         جاں   چلے تیری رِضا پر بیکس و مجبور کی

اَعْلٰی عِلِّیِّیْن میں   یارب! اسے دینا جگہ                     رُوح چلدے جب نکل کر بیکس و مجبور کی

ہو  بقیعِ پاک  کی  اللّٰہ !   پوری  آرزو                 ازپئے حَسنَین و حیدر بیکس و مجبور کی

 



[1]     جب سرکارِ دو عالم،نُورِ مجَسَّم صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّمکسی طرف توجُّہ فرماتے تو پورے مُتَوَجِّہ ہوتے، مبارک نظریں   نیچی رہتی تھیں  ، نظر شریف آسمان کے بجائے زیادہ تر زمین کی طرف ہوتی تھی، اکثر آنکھ مبارک کے کنارے سے دیکھا کرتے تھے۔(الشَّمائل لِلترمذی  ص ۲۳ حدیث۷) مزید معلومات کیلئے  دعوتِ اسلامی کے اِشاعتی ادارے مکتبۃُ المدینہ کی مطبوعہ کتاب ’’پردے کے بارے میں   سُوال جواب‘‘ صَفْحَہ312  تا314کا مُطالَعہ فرما یئے۔   ؎   

 یا لٰہی رنگ لائیں   جب مری بے باکیاں            ان کی نیچی نیچی نظروں   کی حیا کا ساتھ ہو

 



Total Pages: 406

Go To