Book Name:Wasail e Bakhshish

ہر اِک پر رَحمت کی نَظَر ہے،          یا اللّٰہُ      یا اللّٰہ

رات نے جب سر اپنا چھُپایا چِڑیوں   نے یہ ذِکر سنایا

                                                          نَغمہ   بار    نسیمِ   سَحَر   ہے    یا اللّٰہُ         یا اللّٰہ

بَخش دے تُو عطارؔ کو مولیٰ واسِطہ تُجھ کو اُس پیارے کا

جو سب  نبیوں   کا    سَرور ہے             یا اللّٰہُ           یا اللّٰہ

 

اللّٰہ ہمیں   کردے عطاقُفلِ مدینہ([1])

اللّٰہہمیں   کر دے عطا  قُفلِ مدینہ

ہر ایک مسلماں   لے لگا قفلِ مدینہ

یارب نہ ضَرورت کے سوا کچھ کبھی بولوں  !

                                                                                       اللّٰہ   زَباں    کا     ہو  عطا        قفلِ  مدینہ

بک بک کی یہ عادت نہ سرِ حشر پھنسا دے

اللّٰہ  زَباں      کا  ہو  عطا       قفلِ  مدینہ

ہرلَفظ کا کس طرح حساب آہ! میں   دوں   گا

      اللّٰہ    زَباں  کا    ہو  عطا      قفلِ  مدینہ

اکثر مِرے  ہونٹوں   پہ رہے ذِکرِ  محمّد

اللّٰہ  زَباں    کا  ہو  عطا  قفلِ  مدینہ

بڑھتا ہے خَموشی سے وقار اے مرے پیارے

اے بھائی! زَباں   پر تُو لگا قفلِ مدینہ

 

ہے دبدبہ خاموشی میں   ہبیت بھی ہے پِنہاں 

اے بھائی! زَباں   پر تو لگا قفلِ مدینہ

رکھ لیتے تھے پتھر سُن ابوبکر دَہَن میں ([2])

اے بھائی! زَباں   پر تو لگا قفلِ مدینہ

چُپ رہنے میں   سو سکھ ہیں   تو یہ تجرِبہ کرلے

 



[1]     ’’ قفلِ مدینہ ‘‘دعوت اسلامی کے مدنی ماحول میں   بولی جانے والی ایک اصطلاح ہے کسی بھی عضو کو گناہ اور فضولیات سے بچانے کو قفلِ مدینہ لگانا کہتے ہیں  ۔مثلاً فضول گوئی سے جو پرہیز کرتا ہے اور خاموشی کی عادت ڈالنے کیلئے حسبِ ضرورت اشاروں   سے یا لکھ کر گفتگو کرتا ہے اُس کے بارے میں   کہا جائے گا کہ ’’اس نے زَبان کا قفلِ مدینہ لگایا ہے۔‘‘

[2]     غیر ضروری گفتگو سے بچنے کیلئے سیِّدُنا ابو بکر صدِّیق رضی اللّٰہ تعالٰی عنہ مُنہ میں   پتھر رکھ لیتے تھے۔(احیاء العلوم ج۳ص۱۳۷) 



Total Pages: 406

Go To