Book Name:Wasail e Bakhshish

 

کردوں   میں   کاش ! جا لیوں   پر اپنی جاں   فِدا

رَوضے کا ان کے جس گھڑی جلوہ نصیب ہو

مِحراب و مِنبر اور وہ ہریالی جالیاں 

اور مسجِدِ حبیب کا جلوہ نصیب ہو

جنَّت کی پیاری کیاری کی تھیں   خوب رَونقیں 

پھر بیٹھنا وہاں   پہ خُدایا نصیب ہو

چُھپ چُھپ کے دیکھوں   منبرِاقدس کی پھر بہار

شاید کبھی تو شاہ کا جلوہ نصیب ہو

ہِجرِ رسول میں   ہمیں   یاربِّ مصطَفٰے

اے کاش! پھو ٹ پھوٹ کے رونا نصیب ہو

عطارؔ کی ہو حاضِری ہر سال یا خدا

آخِر کو  طیبہ میں   اسے مرنا نصیب ہو

 

تُو ہی مالکِ بَحرو بَر ہے یا اللّٰہ ُ یا اللّٰہ

تُو ہی مالِکِ بَحرو بَر ہے  یا اللّٰہُ  یا اللّٰہ

تُو ہی خالِقِ جِنّ و بَشَر ہے یا اللّٰہُ  یا اللّٰہ

تُو اَبَدی ہے تُو اَزَلی ہے تیرا نام عَلیم و علی ہے

ذات تِری سب سے بَرتَر ہے یا اللّٰہُ  یا اللّٰہ

وَصف بیاں  کرتے ہیں   سارے سَنگ و شَجر اور چاند ستارے

تسبیحِ   ہر خُشک   و تَر ہے                        یا اللّٰہُ                           یا اللّٰہ

تیرا چرچا ہر گھر آنگن صحرا صحرا گلشن گلشن

وَاصِف ہر پھول اور ثَمَر ہے یا اللّٰہُ  یا اللّٰہ

خَلقت جب پانی کو تَرسے رِم جھم رِم جھم بَرکھا بَرسے

 



Total Pages: 406

Go To