Book Name:Wasail e Bakhshish

دشتِ عَرَب نصیب ہو صَحرا نصیب ہو

حج کا سفر پھر اے مِر ے مولیٰ نصیب ہو

عَرفات کا مِنٰی کا نظارہ نصیب ہو

اللّٰہ! دیدِ گنبد خضرا نصیب ہو

یارب! رسولِ پاک کا جلوہ نصیب ہو

چوموں   عرب کی وادیاں   اے کاش! جا کے پھر

صَحرا میں   اُن کے گھومنا پھرنا نصیب ہو

کعبے کے جلووں   سے دلِ مُضطَر ہو کاش! شاد

لُطفِ طوافِ خانۂ کعبہ نصیب ہو

 

مکّے میں   ان کی جائے وِلادت پہ یاخدا

پھر چشمِ اشکبار جمانا نصیب ہو

کس طرح شوق سے وہاں   کرتے تھے ہم طواف

پھر گِردِ کعبہ جھوم کے پھرنا نصیب ہو

ہم جا کے خوب لَو ٹیں   مدینے کی دھول پر

آنکھوں   میں   خاکِ طیبہ لگانا نصیب ہو

صد آفرین! گنبد خَضرا کی تابِشَیں  ([1])

جلووں   میں   اس کے خود کو گُمانا نصیب ہو

واں   چلچلاتی دھوپ کا بھی اِک سُرور ہے

جوتے اُتار کر وہاں   چلنا نصیب ہو

نَمناک آنکھ گنبدِ خضرا کو چوم لے

جُھک جا ئے پھر ادب سے وہ لمحہ نصیب ہو

 



[1]     چمک۔ روشنیاں  ۔ نور



Total Pages: 406

Go To