Book Name:Wasail e Bakhshish

رسولِ پاک کے قدموں   میں   خاتِمہ یارب

بَوقتِ نَزع سلامت رہے مِرا ایماں 

مجھے نصیب ہو توبہ ہے التجا یارب

جو ’’دیں   کا کام‘‘ کریں   دل لگا کے یااللّٰہ

اُنہیں   ہو خواب میں   دیدارِ مصطَفٰے یارب

 

تِری مَحَبَّتاُتر جائے میری نَس نَس میں 

پئے رضا ہو عطا عِشقِ مصطفٰے یارب

زمانے بھر میں   مچا دیں   گے دھوم سنّت کی

اگر کرم نے ترے ساتھ دیدیا یارب

نَماز و روزہ وحَجّ و زکوٰۃ کی توفیق

عطا ہو اُمّتِ محبوب کوسدا یارب

جواب قبر میں   منکَر نکیر کو دوں   گا

ترے کرم سے اگر حوصَلہ ملا یارب

بروزِ حشر چھلکتا سا جام کوثر کا

بدستِ ساقیِٔ کوثر ہمیں   پلا یارب

بقیعِ پاک میں   عطارؔ دَفن ہو جائے

برائے غوث و رضا از پئے ضِیا یارب

 

یارب! پھر اَوج پر یہ ہمارا نصیب ہو

(حَرَمینِ شریفین کی جدا ئی کے چند روز بعد ۸ محرَّمُ الحرام ۱۴۱۵ھ کو یہ کلام تحریر کیا)

یارب پھر اَوج پر یہ ہمارا نصیب ہو

سُوئے مدینہ پھر ہمیں   جانا نصیب ہو

مکّہ بھی ہو نصیب مدینہ نصیب ہو

 



Total Pages: 406

Go To