Book Name:Wasail e Bakhshish

تیرے محبوب کے ٹکڑوں   پہ پلوں   گا یارب!

 

چشمِ نَم دے غمِ سلطانِ اُمَم دے مولیٰ!

 اُن کا کب عاشِقِ صادِق میں   بنوں   گا یارب!

دے دے مرنے کی مدینے میں   سعادت دیدے

کس طرح سندھ کے جنگل میں   مروں   گا یارب!

مجھ گنہگار پہ گر خاص کرم ہوجائے!

جام، طیبہ میں   شہادت کا پیوں   گا یارب!

حج کا ہر سال شَرَف دیدے تو مکّے آکر

جھوم کر کعبے کے چَوگِرد([1])پھروں   گا یارب!

کاش! ہر سال مدینے کی بہاریں   دیکھوں   

سبز گنبد کا بھی دیدار کروں   گا یارب!

اِذْن سے تیرے سَرِ حشر کہیں   کاش!  حُضُور

ساتھ عطارؔ کو جنّت میں   رکھوں   گا یارب!

 

شرف دے حج کامجھے میرے کبریا یارب

شَرَف دے حج کامجھے میرے کبریا یارب

روانہ سُوئے مدینہ ہو قافِلہ یارب

دکھا دے ایک جھلک سبز سبز گنبد کی

بس اُن کے جلووں   میں   آجائے پھر قضا یارب

مدینے جائیں   پھر آئیں   دوبارہ پھر جائیں 

اِسی میں   عمر گزر جائے یاخدا یارب

مِرا ہو گنبدِ خَضرا کی ٹھنڈی چھاؤں   میں 

 



[1]     چاروں   طرف



Total Pages: 406

Go To