Book Name:Wasail e Bakhshish

تُو نشے سے باز آ مت پی شراب         دو جہاں   ہوجائیں   گے ورنہ خراب

فلم بیں   کی آنکھ میں   محشر میں   آگ      آہ! بھر جائیگی تُو فلموں   سے بھاگ

بینڈ باجوں   سے تُو کوسوں   دور بھاگ     ورنہ دوزخ کی تجھے کھائے گی آگ

مت بجاؤ بھائیو! تم تالیاں                 اس طرح کی چھوڑ دو نادانیاں

اے مری بہنو! سدا پردہ کرو           تم گلی کوچوں   میں  مت پھرتی رہو

اپنے دیور جیٹھ سے پردہ کرو             ان سے ہرگز بے تکلُّف مت بنو

ورنہ سن لو قبر میں   جب جاؤ گی           سانپ بچھو دیکھ کر چلّاؤ گی

اے بہن اپنے میاں   کو مت ستا         جب مرے گی پائے گی اس کی سزا

بھائی حق مت مارنا گھر بار کا              ورنہ ہوگا مستحق تُو نار کا

یاالٰہی نیک کر عطارؔ کو

بخش دے تُوبخش دے بدکار کو

 

مثنوی عطارؔ(۴)

سُنّتوں   سے بھائی رشتہ جوڑ تُو                                     نِت نئے فیشن سے منہ کو موڑ تُو

شادیوں   میں   مت گنہ نادان کر                                 خانہ بربادی کا مت سامان کر

سادگی شادی میں   ہو سادہ جہیز                                  جیسا بی بی فاطمہ کا تھا جہیز

نیکیاں   کر جلد تُو بدیوں   سے بھاگ                             قبر میں  ورنہ بھڑک اٹّھے گی آگ

کینۂ مسلم سے سینہ پاک کر                                     اتباعِ صاحبِ لولاک کر

چھوڑ دے داڑھی منڈانا ہے حرام                             ایک مٹھی سے گھٹانا ہے حرام

سنّتوں   پر جو حقارت سے ہنسے                                    وہ عذابِ دائمی([1])میں   جا پھنسے

چھوڑ دے سارے غَلَط رَسم و رَواج                             سنتوں   پر چلنے کا کر عہد آج

خوب کر ذکرِ خدا و مصطَفٰے                                       دل مدینہ یاد سے ان کی بنا

کر عطا یارب غمِ شاہِ اُمَم                                          بھول جائیں   رنج و غم دنیا کے ہم

سنتوں   کی لُوٹنا جا کے متاع([2])                                   ہو جہاں   بھی سنتوں   کا اجتماع

از طفیلِ غوثِ اعظم یاغفور                                      بخش دے ہم عاصِیوں   کے سب قُصُور

یاخدا ہے اِلتِجا عطارؔ کی                                           سُنتیں   اپنائیں   سب سرکار کی

 



[1]     ہمیشہ کا عذاب کیونکہ سنّتِ رسول کی توہین صَریح کفر ہے        ۔

[2]     دولت     ۔



Total Pages: 406

Go To