Book Name:Wasail e Bakhshish

جب ترے ساتھی تجھے چھوڑ آئیں   گے     قبر میں   کیڑے تجھے کھا جائیں   گے

قبر میں   تیرا کفن پھٹ جائے گا             یاد رکھ نازک بدن پھٹ جائے گا

تیرا اک اک بال تک جھڑ جائے گا        خوبصورت جسم سب سڑ جائے گا

آہ! اُبَل کر آنکھ بھی بہ جائے گی           کھال اُدھڑ کر قبر میں   رہ جائے گی

سانپ بچّھو قبر میں   گر آگئے!              کیا کرے گا بے عمل گر چھا گئے!

گورِ نیکاں   باغ ہوگی خُلد کا                   مجرِموں   کی قبر دوزخ کا گڑھا

کِھلکھلا کر ہنس رہا ہے بے خبر!             قبر میں   روئے گا چیخیں   مار کر

کر لے توبہ رب کی رحمت ہے بڑی        قبر میں   ورنہ سزا ہوگی کڑی

وقتِ آخر یاخدا! عطارؔ کو

خیر سے سرکار کا دیدار ہو

 

مثنوی عطارؔ (۳)

ہو گیا تجھ سے خدا ناراض اگر             قبر سن لے آگ سے جائیگی بھر

عمر میں   چُھوٹی ہے گر کوئی نماز            جلد ادا کرلے تُو آغفلت سے باز

اے جُواری تُو جوئے سے باز آ           ورنہ پھنس جائے گا جس دن تُو مرا

اے ملاوٹ کرنے والے مان جا          خوف کر بھائی عذابِ نار کا

چھوڑ دو اے تاجرو! کم تولنا               جھوٹ چھوڑو بیچنے میں   بولنا

بھائیوں   کا دل دُکھانا چھوڑ دو              اور تمسخُر([1])بھی اُڑانا چھوڑ دو

سود و رشوت میں   نُحُوست ہے بڑی      نیز دوزخ میں   سزا ہوگی کڑی

دل دُکھانا چھوڑ دیں   ماں   باپ کا            ورنہ ہے اس میں  خسارہ([2])آپ کا

بد گمانی، جھوٹ، غیبت، چغلیاں           چھوڑ دے تُو رب کی نافرمانیاں

مت نکالو گندی گندی گالیاں               یہ گنہ کا کام ہے سن لو میاں

 



[1]     مذاق     ۔

[2]     نقصان ۔



Total Pages: 406

Go To