Book Name:Wasail e Bakhshish

لندن و پیرِس کے سپنے چھوڑ دے       بس مدینے ہی سے رِشتہ جوڑ لے

دل سے دنیا کی مَحَبَّت دور کر            دل نبی کے عشق سے معمور کر

اشک مت دنیا کے غم میں   تُو بہا          ہاں   نبی کے غم میں   خوب آنسو بہا

ہو عطا یارب! ہمیں   سوزِ بلال            مال کے جنجال سے ہم کو نکال

یاالٰہی! کر کرم عطارؔ پر

حُبِّ دُنیا اس کے دل سے دور کر

 

بغیر علم کے فتوی دیناکیسا؟

جس نے بغیر علم کے فتوی دیا گیا تو اس کا گناہ فتوی والے پر ہے۔

  (سنن ابوداؤد        ج۳ص۴۴۹حدیث۳۶۵۷)

مثنویِ عطارؔ(۲)

بے وفا دنیا پہ مت کر اِعتبار               تُو اچانک موت کا ہوگا شکار

موت آکر ہی رہے گی یاد رکھ!           جان جا کر ہی رہے گی یاد رکھ!

گر جہاں   میں   سو برس تُوجی بھی لے      قبر میں   تنہا قِیامت تک رہے

جب فِرِشتہ موت کا چھا جائے گا         پھر بچا کوئی نہ تجھ کو پائے گا

موت آئی پہلواں   بھی چل دیئے        خوبصورت نوجواں   بھی چل دیئے

دنیا  میں    رہ  جائے  گا  یہ  دبدبہ              زور تیرا خاک میں   مل جائے گا

تیری طاقت تیرا فن عُہدہ تِرا           کچھ نہ کام آئے گا سرمایہ ترا

قبر روزانہ یہ کرتی ہے پکار                مجھ میں   ہیں   کیڑے مکوڑے بیشمار

یاد رکھ میں   ہوں   اندھیری کوٹھڑی      تجھ کو  ہوگی مجھ میں   سُن وَحشت بڑی

میرے اندر تُو اکیلا آئے گا                ہاں   مگر اعمال لیتا آئے گا

نر م بستر گھر پہ ہی رہ جائیں   گے              تجھ کو فرشِ خاک پر دفنائیں   گے

گھپ اندھیری قبر میں   جب جائے گا       بے عمل!بے انتِہا گھبرائے گا

کام مال و زر نہیں   کچھ آئے گا               غافل انساں   یاد رکھ پچھتائے گا

 



Total Pages: 406

Go To