Book Name:Wasail e Bakhshish

ھم غریبوں   کے ُمقدَّر کو جگانے کیلئے             مرحبا صد مرحبا موئے مبارک آگئے

مجھ ذلیل و خوار پر بدکار و بد کردار پر             ہے کرم سرکار کا موئے مبارک آگئے

نور کی برسات ہوگی عنقریب اب زَور دار        ابرِرحمت چھا گیا موئے مبارَک آگئے

رنج و غم کافور ہوں   گے ہیں   غمزدوں   کے اس کی ہے دِید میں   غم کی دوا موئے مبارک آگئے

جو کرے تعظیم دل سے دوجہاں   میں   کامیاب    ہوگیا ہاں   ہوگیا مُوئے مبارک آگئے

اپنے رب سے مانگ لو دونوں   جہاں   کی نعمتیں       رحمتوں   کا درکُھلا موئے مبارک آگئے

اِنْ شَآءَ اللہ آرزوئیں   آئیں   گی بر  رُوبَرو           مانگ لو آکر دُعا موئے مبارک آگئے

آؤ دیوانو! تم آؤ لیکے چشمِ اشکبار                  ان سے ان کو مانگنا مُوئے مبارک آگئے

نَزع رُوح و قبر میں   اور حَشْر کے میداں   میں   کام

بن گیا عطارؔ کا مُوئے مبارک آگئے

 

مثنویِ عطارؔ (۱)

حمدِ ربِّ مصطَفٰے سے اِبتِداء                ہو دُرُود اُمّی نبی پر دائما

اس جہاں   میں   ہر طرف ہیں   مشکلیں       ہر جگہ ہیں   آفتیں   ہی آفتیں

کچھ گِھرے غم میں   تو کچھ بیمار ہیں            تو کئی قرضے کے زیرِ بار ہیں

ہیں   بہت کم لوگ دنیا میں   سُکھی           اکثر افراد اِس جہاں   میں   ہیں   دُکھی

چل دیئے دنیا سے سب شاہ و گدا        کوئی بھی دنیا میں   کب باقی رہا!

جیتنے دنیا سکندر تھا چلا                      جب گیا دنیا سے خالی ہاتھ تھا

لہلہاتے کھیت ہوں   گے سب فنا          خوش نُما باغات کو ہے کب بقا ؟

تُو خوشی کے پھول لے گا کب تلک؟    تُو یہاں   زندہ رہے گا کب تلک؟

دولتِ دنیا کے پیچھے تُو نہ جا                 آخِرت میں   مال کا ہے کام کیا؟

مالِ دنیا دو۲ جہاں   میں   ہے وبال          کام آئے گا نہ پیشِ ذوالجلال

رزق میں   برکت کی تو ہے جُستُجو         آہ! نیکی کی کرے کون آرزو!

مت لگا تُو دل یہاں   پچھتائے گا          کس طرح جنّت میں   بھا ئی جائے گا ؟

 



Total Pages: 406

Go To