Book Name:Wasail e Bakhshish

 

دو جہاں   کی نعمتیں   ملتی ہیں   روزہ دار کو

جو نہیں   رکھتا ہے روزہ وہ بڑا نادان ہے

یاالٰہی! تُو مدینے میں   کبھی رَمضاں   دکھا

مُدّتوں   سے دل میں   یہ عطارؔ کے ارمان ہے

 

بعدِ رَمضان عید ہوتی ہے

رب کی رَحمت مزید ہوتی ہے                                        بعدِ رَمضان عید ہوتی ہے

اُس پہ قربان ’’عید‘‘ ہوتی ہے                                      جس کو آقا کی دید ہوتی ہے

روزہ داروں   کی عید ہوتی ہے                                         عید تجھ کو مبارَک اے صائِم([1])!

سن لو! تم پر شدید ہوتی ہے                                           روزہ خورو! خدا کی ناراضی

کیسی مِٹّی پلید ہوتی ہے!                                               تیری شیطان! ماہِ رَمضاں   میں

مغفِرت کی نَوِید([2])ہوتی ہے                                           روزہ داروں   کے واسطے وَاللّٰہ

بولے، ’’نیکوں   کی عید ہوتی ہے‘‘                                   عید کے دن عمر یہ رو رو کر

اُن سے رحمت بعید([3])ہوتی ہے                                     جو کوئی رب کو کرتے ہیں   ناراض

عید، یومِ وعید([4])ہوتی ہے                                            فِلم بِینوں  ([5]) کے حق میں  سن لو یہ

کون کہتا ہے عید ہوتی ہے!                                           بے نمازوں   کی روزہ خوروں   کی

اُس مسلماں   کی عید ہوتی ہے                                         جس کو آقا مدینے بُلوائیں

جانے کب میری عید ہوتی ہے!                                     مجھ کو ’’عیدی‘‘ میں   دو بقیع آقا

کیا بھلا اُس کی عید ہوتی ہے!                                         جو بچھڑ جائے ان کی گلیوں   سے

عید عطارؔ اُس کی ہے جس کو

خواب میں   ان کی دید ہوتی ہے

 

ہو گیا فضلِ خدا مُوئے مبارَک آگئے

ہو گیا فضلِ خدا مُوئے مبارَک آگئے             دل خوشی سے جھوم اُٹھا مُوئے مبارَک آگئے

اے خُوشا صلِّ علیٰ مُوئے مبارک آگئے         مرحبا صد مرحبا موئے مبارک آگئے

مصطَفے کے مُوئے اقدس اور مِرا غُربَت کدہ      مرحبا صد مرحبا موئے مبارَک آگئے

 



[1]     روزہ دار  ۔

[2]     خوشخبری    ۔

[3]     دُور ۔

[4]     فلم دیکھنے والے  ۔

[5]     سزا دینے کی دھمکی ،سزا دینے کا وعدہ ۔



Total Pages: 406

Go To