Book Name:Wasail e Bakhshish

تیری فُرقت میں   ترے عاشق کا دل ٹکڑے ہوا

اور سینہ چاک تیرے ہِجر میں   رَمضان ہے

وقتِ اِفطار و سَحر کی رَونقیں   ہوں   گی کہاں  !

چند دن کے بعد یہ سارا سماں   سُنسان ہے

تیری آمد سے دلِ پَژمردہ کھل اٹّھے مگر

جلد تڑپا کر ہمیں   تُو چل دیا رَمضان ہے

ہائے صد افسوس! رَمضاں   کی نہ ہم نے قدر کی

بے سبب ہی بخش دے یارب کہ تُو رحمٰن ہے

ماہِ رَمضاں   تجھ میں   جو روزے نہیں   رکھتا کوئی

وہ بڑا محروم ہے بدبخت ہے نادان ہے

 

کر رہے ہیں   تجھ کو رو رو کر مسلماں   الوداع

آہ!اب تُو چند گھڑیوں   کا فقط مہمان ہے

روک سکتے ہی نہیں   ہائے تجھے اب کیا کریں  !

سب کو روتا چھوڑ کر تُو چلدیا رَمضان ہے

السلام اے ماہِ رمضاں  تجھ پہ ہوں   لاکھوں   سلام

ہجر میں   اب تیرا ہر عاشق ہوا بے جان ہے

چند آنسو نَذر ہیں   بس اور کچھ پلّے نہیں   

نیکیوں   سے آہ! یہ خالی مِرا دامان ہے

واسِطہ رَمضان کا یارب! ہمیں   تُو بخش دے

نیکیوں   کا اپنے پلّے کچھ نہیں   سامان ہے

دست بستہ التجا ہے ہم سے راضی ہو کے جا

بخشوانا حشر میں   ہاں   تو مَہِ غُفران ہے

کاش! آتے سال ہو عطارؔ کو رَمضاں   نصیب

 



Total Pages: 406

Go To