Book Name:Wasail e Bakhshish

بے عدد کافِر مسلماں   ہو گئے          دعوتِ اسلامی سے یوں   پیار ہے

بے نَمازی بھی نَمازی ہو گئے          دعوتِ اسلامی سے یوں   پیار ہے

چور ڈاکو آئے اور تائب ہوئے        دعوتِ اسلامی سے یوں   پیار ہے

زانی و قاتل بھی تائب ہو گئے         دعوتِ اسلامی سے یوں   پیار ہے

اور شرابی آئے تائب ہو گئے         دعوتِ اسلامی سے یوں   پیار ہے

سنَّتوں   کی ہر طرف آئی بہار           دعوتِ اسلامی سے یوں   پیار ہے

بخشوانا آپ ہی عطارؔ کو                  سب گنہگاروں   کا یہ سردار ہے

 

آخِری روزے ہیں   دل غمناک مُضطَر جان ہے

آخِری روزے ہیں   دل غمناک مُضطَر جان ہے

حسرتا وا حسرتا اب چل دیا رَمضان ہے

عاشِقانِ ماہِ رَمضاں   رو رہے ہیں   پھوٹ کر

دل بڑا بے چین ہے اَفسردہ روح و جان ہے

درد و رِقّت سے پچھاڑیں   کھا کے روتا ہے کوئی

تو کوئی تصویرِ غم بن کر کھڑا حیران ہے

اَلفِراقُ آہ الفِراق اے رب کے مہماں   اَلفِراق!

اَلوداع اب چلدیا تو اے مہِ رَمضان ہے

داستانِ غم سنائیں   کس کو جا کر آہ! ہم

یارسولَ اللّٰہ دیکھو چل دیا رَمضان ہے

خوب روتاہے تڑپتا ہے غمِ رَمضان میں 

جو مسلماں   قَدر دان و عاشقِ رَمضان ہے

 

روتے روتے ہچکیاں   بندھ جاتی ہیں  عُشّاق کی

تجھ میں   کیسا سوز اے اللّٰہکے مہمان ہے

 

 



Total Pages: 406

Go To