Book Name:Wasail e Bakhshish

مالِکی ہو حنبلی ہو حنفی ہو یا شافِعی

مت تَعَصُّب رکھنا اور کرنا نہ ان سے دشمنی

سارے سُنّی عالِموں   سے تُوبناکر رکھ سدا

کر ادب ہر ایک کا، ہونا نہ تُو اُن سے جدا

مجھ کو اے عطّارؔ سُنّی عالِموں   سے پیار ہے

اِنْ شَآءَ اللہ دوجہاں   میں   میرا بیڑا پار ہے

 

ہم کو اللّٰہ اور نبی سے پیار ہے

ہم کو اللہ اور نبی سے پیار ہے         اِنْ شَآءَ اللہ اپنا بیڑا پار ہے

اُمَّہاتُ المؤمنین و چار یار             سب صَحابہ سے ہمیں   تو پیار ہے

غوث و خواجہ داتا اور احمدرضا        سے بھی اور ہر اِک ولی سے پیار ہے

’’یَارَسُوْلَ اللّٰہِ اُنْظُرْحَالَنَا‘‘           طالبِ نظرِ کرم بدکار ہے

’’یَاحَبِیْبَ اللّٰہِ اِسْمَعْ قَالَنَا‘‘          التِجا یاسِیّدَ الْاَبرار ہے

’’اِنَّنِیْ فِیْ بَحْرِ ھَمِّ مُّغْرَقٌ‘‘              ناؤ ڈانواں   ڈول دَر مَنجدھار ہے

’’خُذْیَدِیْ سَھِّلْ لَنَا اَشْکَالَنَا‘‘         ناخُدا آؤ تو بَیڑا پار ہے

ہو عدو غارت وسیلہ اُس کا جو         جانِ عالم! تیرا یارِ غار ہے

دشمنوں   کی جو اُڑا دے گردنیں       یاعمر! درکار وہ تلوار ہے

واسطہ عثماں   کا آقا المدد                دشمنوں   نے مجھ پہ کی یَلغار ہے

 

دشمنانِ دین کو کر دو تباہ                عرض تم سے حیدرِ کرَّار ہے

دامنِ احمدرضا مجھ کو ملا                 ہاں   یہ انعامِ شہِ اَبرار ہے

ہوں   ضِیاء الدِّین کا ادنیٰ گدا            میرے مرشِد کا سخی دربار ہے

تم کو کچھ معلوم ہے یارو! مجھے          دعوتِ اسلامی سے کیوں   پیار ہے

ہے کرم اِس پر خدائے پاک کا       دعوتِ اسلامی سے یوں   پیار ہے

اِس پہ ہے نظرِ کرم سرکار کی          دعوتِ اسلامی سے یوں   پیار ہے

 



Total Pages: 406

Go To