Book Name:Wasail e Bakhshish

درس حاصل بد نصیب ابنِ سِقہ جیسوں   سے کر

قہقہے اور یاوہ گوئی میں   ترا نقصان ہے

بے ضرورت بولنے والا بڑا نادان ہے

 

بھاگتے ہیں   سُن لے بد اَخلاق اِنساں  سے سبھی

مسکرا کر سب سے ملنا دل سے کرنا عاجِزی

بھائیو!ہر دم بچو تم حُبِّ جاہ و مال سے

ہر گھڑی چوکس رہو شیطان کی اِس چال سے

مالداروں   کی خوشامد میں   ہلاکت ہے بڑی

تُو گناہوں   میں   پڑے گا آئے گی شامت تری

کان دھرکے سُن! نہ بننا تُو حریصِ مال و زَر!

کر قناعت اِختیار اے بھائی تھوڑے رِزق پر

دل میں   یہ خواہش نہ رکھنا سب کریں   میرا ادب

ڈر کہیں   ناراض ہو جائے نہ تجھ سے تیرا رب

قلب میں   خوفِ خدا رکھ کر تُو سارے کام کر

کامیابی ہو گی تیری اِنْ شاء اللّٰہ ہر ڈَگر

 

دل کو عشقِ مصطَفٰے سے بھائی تُو آباد کر

تجھ پہ ہوگی سَروَرِ کونین کی میٹھی نظر

خوب خدمت سنَّتوں   کی رات دن کرتے رہو

تم رسالہ مَدنی اِنعامات کا بھرتے رہو

جائیے نیکی کی دعوت دیجئے جا جا کے گھر

کیجئے ہر ماہ مَدنی قافِلوں   میں   بھی سفر

تُو کمر بستہ رہا کر خدمتِ اِسلام پر

راہِ مولیٰ میں   جو آفت آئے اس پر صبر کر

 



Total Pages: 406

Go To