Book Name:Wasail e Bakhshish

حق سے اُمّیدِ  عفوو رَحمت ہے                   تیرے صدقے میں   ملنی جنّت ہے

ایک عرصے سے دل میں   رغبت ہے        سُوئے طیبہ چلوں   یہ حسرت ہے

ایک مدّت سے ہجرو فرقت ہے               کیا مدینے کی اب اجازت ہے؟

آہ! پلّے نہ کچھ تلاوت ہے                       نہ دُرُودوں   کی کوئی کثرت ہے

آہ! عصیاں   کی خوب کثرت ہے               یا نبی! التجائے رحمت  ہے

ایسی عصیاں   کی پڑگئی لت ہے                   پھر وُہی بعدِ توبہ حالت ہے

نیک بندوں   پہ رب کی رحمت ہے             ہر گنہ باعثِ ہلاکت ہے

آگیا آہ! وقتِ رِحلت ہے                       یہ گدا طالبِ زیارت ہے

آنکھ نم ہے نہ کچھ ندامت ہے                 آہ! اعمال کی یہ شامت ہے

موت سر پر ہے تجھ پہ حیرت ہے              جاگ کیوں   مَحوِ خوابِ غفلت ہے

تیری عطاّرؔ کیا حقیقت ہے                       جو ہے سرکار کی بدولت ہے

 

مُعْتَمِر کیلئے دُعاؤں  اور نصیحتوں   کا گُلدَستہ

( مُسافِرِ مدینہ منورہ، عازِمِ مکّہ مکرمہ محمد یونس رضا نوری کی خدمت میں   دعاؤں   اور پَندو نصائح کی خوشبوؤں   سے مَہَکتا مدنی گلدستہ)

پائے گا یونس رضا عُمرے کی خیر اُمّید ہے

گُنبدِ خَضرا کی دید اس کی بِلا شک عید ہے

مرحبا! تم کو مبارَک ہو مدینے کا سفر

فَضلِ رب سے تم پہ نازِل رحمتیں   ہوں   ہر ڈَگر([1])

یاخُدا! آسان ہو اِس کیلئے پیارا سفر

ذَوق بڑھتا ہی رہے اِس کا خدائے بحر و بر

رونے والی آنکھ دے اور چاک سینہ کر عطا

یارب! اس کو الفتِ شاہِ مدینہ کر عطا

 

ذرّے ذرّے کا ادب اللہ اس کو ہو نصیب

سیِّدی احمد رضا کا واسطہ ربِّ مُجیب!

 



[1]     راستہ ۔



Total Pages: 406

Go To