Book Name:Wasail e Bakhshish

وہ دلِ غمزدہ جانتا ہے                              ہائے تڑپا کے رَمضاں   چلا ہے

غم جدائی کا کیسے سہوں   گا                         کس سے غم کا فسانہ کہوں   گا

آنکھ پُر نَم ہے دل رو رہا ہے                      ہائے تڑپا کے رَمضاں   چلا ہے

جاں   فِدا تجھ پہ نانائے حَسنَین                   قلب ہے غمزدہ اور بے چین

دل پہ صدمہ بڑھا جا رہا ہے                       ہائے تڑپا کے رَمضاں   چلا ہے

کر کے تقسیم بخشِش کی اَسناد                      آہ! رنجیدہ دل کر کے تُو شاد

سب کو روتا ہوا چھوڑتا ہے                      ہائے تڑپا کے رَمضاں   چلا ہے

تُو یہ کرنا خُدا سے سفارش،                         اس گنہگار کی کر دے بخشش

تجھ سے عطارؔ کی التِجا ہے

ہائے تڑپا کے رَمضاں   چلا ہے

 

مجھ کو اللّٰہ سے محَبَّت ہے

(۲۲ ربیع الاخر۱۴۳۵ھ)

مجھ  کو   اللّٰہ  سے   محبَّت   ہے                   یہ اُسی کی عطا و رحمت ہے

جس کو سرکار سے محبَّت ہے              اُس کی بخشش کی  یہ ضَمانت ہے

دل میں   قراٰں   کی میرے عظمت ہے   اور پیاری ہر ایک سنّت ہے

سب سے اچھی نبی کی سیرت ہے       چاند سے بھی حسین صورت ہے

مل گئی مجھ کو تیری نسبت ہے            یہ شَرَف ہے بڑی سعادت ہے

آل و اصحاب سے  محبَّت ہے              اور سب اولیا سے اُلفت ہے

یہ  سب  اللّٰہ  کی  عنایت  ہے                 مل گئی مصطَفٰے کی امّت ہے

غوث و خواجہ کی دل میں   اُلفت ہے     قلب میں   عشقِ اعلیٰ حضرت ہے

مرحبا ! اپنی خوب قسمت ہے             پیرو مرشد کی دل میں   چاہت ہے

عاشقانِ نبی سے الفت ہے                دشمنانِ نبی سے نفرت ہے

ہائے دنیا کی دل میں   چاہت ہے          نفس کی یہ کھلی شرارت ہے

 

نہ طلبگارِ مال و دولت ہے                         اس گدا کو کرم کی حاجت ہے

دو جہاں   میں   وُہی سلامت ہے                 جس مسلماں   پہ رب کی رَحمت ہے

یا نبی ! پھنس گیا ہلاکت ہے                      یہ گدا سائلِ شَفاعت ہے

 



Total Pages: 406

Go To