Book Name:Wasail e Bakhshish

ساس نندوں   پر بگڑنا آفتوں   کاجال ہے

ماں   سمجھ کرجو بہوکرتی ہے خدمت ساس کی

راج کرتی ہے سدا سارے گھرانے پر وہی

ساس نندوں   کی تُو خدمت کر کے ہوجا کامیاب

ان کی غیبت کرکے مت کر بیٹھنا خانہ خراب

 

ساس اور نندیں   اگر سختی کریں   تو صَبْر کر

صَبْر کر بس صَبْر کر چلتا رہے گا تیرا گھر

ساس اور نندوں   کا شِکوہ اپنے مَیکے میں   نہ کر

اِس طرح برباد ہوسکتا ہے بیٹی تیرا گھر

میکے کے مت کر فضائل تُو بیاں   سسرال میں 

اب سمجھ سسرال ہی کو اپنا گھر ہر حال میں 

یاد رکھ تُو نے زباں   کھولی اگر سسرال میں 

پھنس کے تُو جھگڑوں    کے سُن رہ جائے گی جنجال میں 

ساس چیخی تُو بھی بِپھری اور لڑائی ٹھن گئی

ہے کہاں   بھول ایک کی دو ہا تھ سے تالی بجی

درس دے ’’فَیضانِ سنّت‘‘ سے سدا سسرال میں 

 مَدنی ماحول اس طرح بن جائے گاسسرال میں   

گر نصیحت پر عمل عطارؔؔ کی ہوگا تِرا

اِنْ شَاءَ اللّٰہ اپنے گھر میں   تُو سکھی ہوگی سدا

 

آہ! رَمضان اب جا رہا ہے ہائے تڑپا کے رَمضاں   چلا ہے

آہ! رَمضان اب جا رہا ہے                        ہائے تڑپا کے رَمضاں   چلا ہے

ٹکڑے ٹکڑے مرا دل ہوا ہے                  ہائے تڑپا کے رَمضاں   چلا ہے

دیکھ کر چاند میں   رو پڑا تھا                         سامنے ہِجر کا غم کھڑا تھا

جلد رخصت کا وقت آگیا ہے                    ہائے تڑپا کے رَمضاں   چلا ہے

اشک آنکھوں   سے اب بہ رہے ہیں                    ہجر کا غم جو ہم سہ رہے ہیں

 



Total Pages: 406

Go To