Book Name:Wasail e Bakhshish

خوشی کی لہر دوڑی ہر طرف رَمضان جب آیا

ہیں   اب رنجیدہ رنجیدہ مسلماں    یارسولَ اللّٰہ

مَسرَّت ہی مَسرَّت اورخوشی ہی تھی خوشی جس دم

نَظَر آیا ہِلالِ ماہِ رَمضاں   یارسولَ اللّٰہ

شہا! اب غم کے مارے خون کے آنسو بہاتے ہیں 

چلا تڑپا کے ہائے ماہِ رَمَضاں   یارسولَ اللّٰہ

چلا اب جلد یہ رَمضاں   ستائیس آگئی تاریخ

فَقَط دو دن کا اب رَمضاں   ہے مہماں  یارسولَ اللّٰہ

فضائیں   نور برساتیں   ہوائیں   مُسکراتی تھیں 

سماں   اب ہوگیا ہر سَمت ویراں   یارسولَ اللّٰہ

 

رِیاضت کچھ نہ کی ہم نے عبادت کچھ نہ کی ہم نے

رہے بس ہر گھڑی مشغولِ عصیاں   یارسولَ اللّٰہ

میں  ہائے جی چُراتا ہی رہا رب کی عبادت سے

گزارا غفلتوں   میں   سارا رَمَضاں   یارسولَ اللّٰہ

میں   سوتا رہ گیا غفلت کی چادر تان کر افسوس

خدارا میری بخشش کا ہو ساماں   یارسولَ اللّٰہ

جدائی کی گھڑی جاں   سوز ہے عُشّاقِ رَمضاں   پر

چلا ان کو رُلا کر ماہِ رَمضاں   یارسولَ اللّٰہ

تڑپتے ہیں   بلکتے ہیں   قرار آتا نہیں   ان کو

بہت بے چَین ہیں   عُشّاقِ رَمضاں   یارسولَ اللّٰہ

گناہوں   کی سِیاہی چھا رہی ہے رُخ پہ محشر میں 

مِرا چہرہ پئے رَمضاں   ہو تاباں   یارسولَ اللّٰہ

مہِ رَمضاں   کی رخصت جانِ عاشق پر قِیامت ہے

گدا تیرے ہیں   حیران وپریشاں   یارسولَ اللّٰہ

 



Total Pages: 406

Go To