Book Name:Wasail e Bakhshish

قلبِ عطارؔ میں   قافلے میں   چلو

 

پاؤ گے بخششیں   قافلے میں   چلو

پاؤگے بخششیں   قافلے میں   چلو                             جنّتیں   بھی ملیں  ، قافلے میں   چلو

رِزق کے دَر کُھلیں  ، قافلے میں   چلو                       برکتیں   بھی ملیں  ، قافلے میں   چلو

زَخم بگڑے بھریں  ، پھوڑے پُھنسی مِٹیں                  گرہوں  مَسّے جَھڑیں  ، قافِلے میں   چلو

کالے یَرقان میں  ، کیوں   پریشان ہیں                        پائیں   گے صِحّتیں  ، قافِلے میں   چلو

ٹیڑھی ہوں   ہڈّیاں  ، ہوں   گی سیدھی میاں                   درد سارے مِٹیں  ، قافِلے میں   چلو

دَرد گمبِھیر ہو، کوئی دِلگیر ہو                                ہوں   گی حل مشکلیں  ، قافِلے میں   چلو

گرچِہ بیماریاں  ، ہوں   کہیں   پتھریاں                          پاؤ گے صحّتیں   ، قافِلے میں   چلو

تنگدستی ہو گھر میں   یا ناچاقِیاں                                آئیں   گی بَرکتیں   ، قافِلے میں   چلو

جو کہ مَفقود([1])ہو وہ بھی موجود ہو                           اِنْ شَآءَ اللہ چلیں   ، قافِلے  میں     چلو

دُور ہوں   گے اَلَم ہوگا رب کا کرم                          غم کے مارے سنیں   قافلے میں   چلو

دردِسر ہو اگر دُکھ رہی ہو کمر                               درد دونوں   مٹیں   ، قافِلے میں   چلو

باپ بیمار ہو، سخت بیزار ہو                                 پائے گا صِحّتیں   ، قافِلے میں   چلو

ماں   جو بیمار ہو، یا وہ ناچار ہو                                 رنج و غم مت کریں  ، قافِلے میں   چلو

وا([2])ہو بابِ کرم، دُور ہوں   رنج و غم                        پھرسے خوشیاں   ملیں  ، قافِلے میں   چلو

 

زلزلہ آئے گر، آکے چھا جائے گر                    صِرف حق سے ڈریں   قافِلے میں   چلو

زلزلہ عام تھا ہر سُو کُہرام تھا                            اس سے لو عِبرتیں   قافِلے میں   چلو([3])

زَلزلے سے اَماں  ، دے گا ربِّ جہاں                    سب دعائیں   کریں  ، قافِلے میں   چلو

ہوں   بپا زلزلے، گرچِہ آندھی چلے                    صبر کرتے رہیں  ، قافِلے میں   چلو

ہے شِفا ہی شِفا، مرحبا! مرحبا!                          آکے خود دیکھ لیں  ، قافِلے میں   چلو

پیٹ میں   دَرد ہو رنگ بھی زَرد ہو                      آکے لو صِحَّتیں   قافِلے میں   چلو

ہے طلب دید کی، دید کی عید کی                        کیا عَجَب وہ دِکھیں   قافِلے میں   چلو

 



[1]     غائب ،گمشدہ  ۔

[2]     وا ہونا یعنی کھلنا ۔

[3]     :۳  رَمَضان المبارک ۱۴۲۶ھ( 8-10-05)بروز ہفتہ مشرِقی پاکستان(کشمیر۔ خیبرپختونخواہ) وغیرہ میں   آنے والے خوفناک زلزلے کی طرف اس شعر میں   اشارہ ہے۔ اِس زلزلے میں   لاکھوں   افراد فوت ہوئے تھے۔ زخمیوں   ،بچھڑنے والوں   اور مالی نقصانوں   کا تو کوئی شمار ہی نہیں  ۔     



Total Pages: 406

Go To