Book Name:Wasail e Bakhshish

زُلفِ مَحبوب کا بنا قَیدی                   اور ہرگز نہ پھر چُھڑا یارب

مُشکِلوں   میں   دے صبر کی توفیق                  اپنے غم میں   فَقَط گُھلا یارب

دے دے سوزِ بِلال یااللّٰہ               اَشکبار آنکھ ہو عطا یارب

آہ! اَعدا ہیں   خون کے پیاسے           دشمنوں   سے مجھے بچا یارب

دے شہادت مجھے مدینے میں           ازپئے شاہِ کربلا یارب

سبز گنبد کے زیرِ سایہ ہو                         جاں   مِری جسم سے جُدا یارب

قبر میری بنے مدینے میں                تجھ سے ہے یہ مِری دُعا یارب

حِرصِ دنیا نکال دے دل سے           بس رہوں   طالبِ رضا یارب

دیدے ’’قُفلِ مدینہ‘‘ آنکھوں   کا              واسطہ چار یار کا یارب

دیدے ’’قُفلِ مدینہ‘‘ لب کا بھی               واسطہ چار یار کا یارب

کاش!عادت فُضُول باتوں   کی            دُور ہو ازپئے رضا یارب

واسِطہ میرے پیرومرشِد کا              مجھ کو تُو مُتقَّی بنا یارب

دِل کا اُجڑا چمن ہو پھر آباد              کوئی ایسی ہوا چلا یارب

ہر برس کاش! آکے مکّے میں           لطف اٹھاؤں   طواف کا یارب

جس کسی نے کہا، ’’دُعا کرنا‘‘             اُس کا پورا ہو مُدَّعا یارب

کر دے جنّت میں   تُو جَوار اُن کا                         اپنے عطّاؔر کو عطا یارب

 

مُعاف فَضْل و کرم سے ہو ہر خطا یارب

مُعاف فضل و کرم سے ہو ہر خطا یارب

ہو مغفِرت پئے سلطانِ انبیا یارب

بِلا حساب ہو جنّت میں   داخِلہ یارب

پڑوس خُلد میں   سرور کا ہوعطا یارب

نبی کا صَدقہ سدا کیلئے تُو راضی ہو

کبھی بھی ہونا نہ ناراض یاخدا یارب

 



Total Pages: 406

Go To