Book Name:Wasail e Bakhshish

الفتِ مصطَفٰے اور خوفِ خدا                               چاہئے گر تمہیں   قافِلے میں   چلو

گر مدینے کا غم چاہئے چشمِ نَم                             لینے یہ نعمتیں   قافِلے میں   چلو

قرض ہوگا ادا آکے مانگو دعا                              پاؤگے بَرکتیں   قافِلے میں   چلو

دُکھ کا دَرماں   ملے آئیں   گے دن بھلے                      ختم ہوں   گَردِشیں   قافِلے میں   چلو

غم کے بادَل چَھٹیں   خوب خوشیاں   ملیں                     دل کی کلیاں   کِھلیں   قافِلے میں   چلو

ہو قَوی حافِظہ ٹھیک ہو ہاضِمہ                               کام سارے بنیں   قافِلے میں   چلو

علم حاصل کرو جَہْل زائل کرو                           پاؤ گے راحتیں   قافِلے میں   چلو

قرض کا بار ہو، بے کسی یار ہو                             چاہو گر راحتیں   قافِلے میں   چلو

گرچِہ ہوں   گرمیاں   یا کہ ہوں   سردیاں                    چاہے ہوں   بارِشیں   قافِلے میں   چلو

کُوندیں   گر بجلیاں   یا چلیں   آندھیاں                       چاہے اولے پڑیں   قافِلے میں   چلو

 

بارہ مَہ کیلئے تیس دن کیلئے              بارہ دن دے ہی دیں   قافِلے میں   چلو

سنّتیں   سیکھنے تین دن کیلئے                                ہر مہینے چلیں   قافِلے میں   چلو

اے مِرے بھائیو! رَٹ لگاتے رہو                        قافِلے میں   چلیں   قافِلے میں   چلو

فون پر بات ہو یا مُلاقات ہو                                سب سے کہتے رہیں   قافِلے میں   چلو

آپ بازار میں   ہوں   یا دفتر میں   ہوں                         سب سے کہتے رہیں   قافِلے میں   چلو

درس دیں   یا سُنیں   یا بیاں   جو کریں                            اس میں  یہ بھی کہیں   قافِلے میں   چلو

عاشِقانِ رسول([1]) ان سے ہم مدنی پھول                   آؤ لینے چلیں   قافِلے میں   چلو

عاشِقانِ رسول آئے لینے دُعا                              آؤ مل کر چلیں   قافِلے میں   چلو

عاشِقانِ رسول آئے ہیں   مرحبا                            خیر خواہی([2])کریں   قافِلے میں   چلو

آپ جب بھی سنیں   قافلہ آگیا                            خیر خواہی کریں   قافِلے میں   چلو

کھانا لے کے چلیں   ٹھنڈا شربت بھی لیں                    خیر خواہی کریں   قافِلے میں   چلو

ان پہ ہوں   رحمتیں   قافِلے کا سُنیں                            خیر خواہی کریں   قافِلے میں   چلو

بخش دے میرے مولیٰ تُو ان کو کہ جو                      خیر خواہی کریں   قافِلے میں   چلو

یاخدا ہر گھڑی رٹ ہو عطارؔ کی

قافِلے میں   چلیں   قافِلے میں   چلو

 

 



[1]     دعوت اسلامی کے مدنی ماحول میں   اسلامی بھائیوں   کو بالخصوص مدنی قافِلے والوں   کو ’’عاشقانِ رسول‘‘کہتے ہیں  ۔ ۔

[2]     مدنی مرکز کی ہدایت ہے کہ جب آپ کے علاقے میں   عاشِقانِ رسول کا مدنی قافلہ تشریف لائے تو ان کی خدمت میں   حاضر ہو کر دُعاء کے طالب ہوں  ۔اگر حیثیت ہو تو کھانا،چائے وغیرہ ورنہ سادہ پانی ہی پیش کریں  ۔اس طرح خاطِرمَدارت کرنے کو دعوت اسلامی کے مدنی ماحول میں  ’’ خیرخواہی‘‘ کہتے ہیں  ۔



Total Pages: 406

Go To