Book Name:Wasail e Bakhshish

ہائے عطارِؔ بدکار کاہِل                رہ گیا یہ عبادت سے غافل

اس سے خوش ہو کے ہونا روانہ    اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

سالِ آیِندہ شاہِ حرم تم

کرنا عطارؔ پر یہ کرم تم

تم مدینے میں   رَمضاں   دِکھانا

الوداع الوداع آہ! رَمضاں

 

اے مرے بھائیو سب سنودھرکے کاں   عیش عشرت کی اُڑ جائیں  گی دھجّیاں 

اے مرے بھائیوسب سنو دھر کے کاں                   عیش وعشرت کی اُڑ جائیں  گی دھجّیاں

آخِرت کی کرو جلد تیّاریاں                                موت آکر رہے گی تمھیں   بے گُماں

موت کا دیکھو اِعلان کرتا ہوا                             سُوئے گورِغریباں([1]) جنازہ چلا

کہتا ہے، جامِ ہستی([2])کو جس نے پیا                        وہ بھی میری طرح قَبر میں   جائیگا

تم اے بوڑھو سنو! نوجوانو سنو                           اے ضَعیفو سنو! پہلوانو سنو!

موت کو ہر گھڑی سر پہ جانو سُنو                          جلد توبہ کرو میری مانو سنو!

جس کا سنسار میں   ہو گیا ہے جنم                            رب کی ناراضیوں   سے بچے دم بہ د م

ورنہ پچھتائے گا قبر میں   لا جَرَم                            ہو گا برزخ میں   رنج اُس کو دوزخ میں   غم

فلم بِینی کا تم مَشغَلہ چھوڑ دو                                سارے آلاتِ لَہو و لَعِب توڑ دو

بھائیو! سب گناھوں   سے منہ موڑ دو                      ناتا([3])تم نیکیوں   ہی سے بس جوڑ دو

ایک دن موت آکر رہے گی ضَرور                       اس کو تم مجرِمو! کچھ سمجھنا نہ دور

بعدِ مُردَن([4]) نہ پاؤ گے کوئی سُرور                        ایسے ہو جائے گا خاک سارا غُرور

 

کب تلک تم حُکومت پہ اِتراؤ گے                       کب تک آخِر غریبوں   کو تڑپاؤ گے

ظالمو! بعد مرنے کے پچھتاؤ گے                         یاد رکّھو! جہنَّم میں   تم جاؤ گے

قبض پَیکِ اَجَل([5])روح کر جائیگا                         جسمِ بے جاں   تڑپ کر ٹَھہَر جائیگا

 



[1]     قبرِستان ۔

[2]     زندگی کا جام   ۔

[3]     رِشتہ ۔

[4]     موت ۔

[5]     موت کا فرشتہ  ۔



Total Pages: 406

Go To