Book Name:Wasail e Bakhshish

نہیں   ہے نامۂ عطارؔ میں   کوئی نیکی              فَقَط ہے تیری ہی رحمت کا آسرا یارب

 

حُبِّ دُنیا سے تُو بچا یا رب!

حُبِّ دُنیا سے تُو بچا یارب                 عاشقِ مُصطَفٰے بنا یارب

کردے حج کا شَرَف عطا یارب         سبز گنبد بھی دے دکھا یارب

ہے تِری ہی عنایت ورحمت             مجھ کو مکّے بلا لیا یارب

آج ہے رُوبرو مرے کعبہ               سلسلہ ہے طواف کا یارب

اَبْر برسا دے نور کا میں   لوں             بارشِ نور میں   نہا یارب

کاش لب پر مِرے رہے جاری         ذِکْر آٹھوں   پَہَر ترا یارب

چشمِ تَر اور قلبِ مُضْطَر دے            اپنی اُلفت کی مَے پِلا یارب

آہ! طُغیانیاں   گناہوں   کی                 پار نیّا مِری لگا یارب

نفس و شیطان ہوگئے غالب             ان کے چُنگل سے تُو چُھڑا یارب

کر کے توبہ میں   پھر گناہوں   میں                ہو ہی جاتا ہوں   مُبتَلا یارب

نِیم جاں   کر دیا گناہوں   نے               مرضِ عصیاں  سے دے شِفا یارب

کس کے در پر میں   جاؤں   گا مولا                   گر تُو ناراض ہوگیا یارب

وقتِ رِحلَت اب آگیا مولیٰ              جلوۂ مصطَفٰے دکھا یارب

قبر میں   آہ! گُھپ اندھیرا ہے           روشنی ہو پئے رضا یارب

سانپ لپٹیں   نہ میرے لاشے سے               قبر میں   کچھ نہ دے سزا یارب

نورِ احمد سے قبر روشن ہو                            وَحشَتِ قبر سے بچا یارب

ہائے! حُسنِ عمل نہیں   پلّے              حشْر میں   میرا ہوگا کیا یارب

گرمیِ حشْر، پیاس کی شدّت              جامِ کوثر مجھے پِلا یارب

خوف دوزخ کا آہ! رحمت ہو             خاکِ طیبہ کا واسطہ یارب

میرا نازُک بَدن جہنَّم سے                از طفیلِ رضا بچا یارب

طالِبِ مغفِرت ہوں   یااللّٰہ              بخش حیدر کا واسطہ یارب

سب نے ٹھکرادیا تو کیا پروا               مجھ کو تیرا ہے آسرا یارب

 



Total Pages: 406

Go To