Book Name:Wasail e Bakhshish

تیرے دیوانے اب رَو رہے ہیں             مُضطَرِب سب کے سب ہو رہے ہیں

ہائے اب وقتِ رخصت ہے آیا            اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

تیرا غم ہم کو تڑپا رہا ہے                       آتَشِ شوق بھڑکا رہا ہے

 

پھٹ رہا ہے ترے غم میں   سینہ         اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

یاد رَمضاں   کی تڑپا رہی ہے                آنسوؤں   کی جھڑی لگ گئی ہے

کہہ رہا ہے یہ ہر ایک قَطرہ                اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

دل کے ٹکڑے ہوئے جا رہے ہیں        تیرے عاشق مرے جا رہے ہیں

رو رو کہتا ہے ہر اک بچارہ                 اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

حسرتا ماہِ رَمضاں   کی رخصت            قلبِ عُشّاق پر ہے قِیامت

کون دے گا انہیں   اب دِلاسا            اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

کوہِ غم عاشقوں   پر پڑا ہے                  ہر کوئی خون اب رو رہا ہے

کہہ رہا ہے یہ ہر غم کا مارا                   اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

تم پہ لاکھوں   سلام آہ! رَمضاں            اَلوَداع آہ! اے رب کے مہماں  !

جاؤ حافِظ خدا اب تمھارا                    اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

نیکیاں   کچھ نہ ہم کر سکے ہیں                 آہ! عصیاں   میں   ہی دن کٹے ہیں

ہائے! غفلت میں   تجھ کو گُزارا            اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

واسِطہ تجھ کو میٹھے نبی کا                      حشر میں   ہم کو مت بھول جانا

 

روزِ محشر ہمیں   بخشوانا                اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

جب گزر جائیں   گے ماہ گیارہ         تیری آمد کا پھر شور ہوگا

کیا مِری زندگی کا بھروسا             اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

ماہِ رَمضاں   کی رنگیں   فَضاؤ!          ابرِ رَحمت سے مَملُو ہواؤ

لو سلام آخِری اب ہمارا              اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

کچھ نہ حُسنِ عمل کر سکا ہوں            نَذر چند اشک میں   کر رہا ہوں

بس یہی ہے مِرا کُل اَثاثہ            اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

 



Total Pages: 406

Go To