Book Name:Wasail e Bakhshish

جو کہ گانے سنیں  ، فلم بِینی کریں           اُن کو کس نے کہا؟ عاشِقانِ رسول

بد نگاہی کریں  ، بد کلامی کریں               اُن کو کس نے کہا؟ عاشِقانِ رسول

کھائیں   رزقِ حرام ، ایسے ہیں   بد لگام       اُن کو کس نے کہا؟ عاشِقانِ رسول

عَہد توڑا کریں   ، جھوٹ بولا کریں          اُن کو کس نے کہا؟ عاشِقانِ رسول

جو ستاتے رہیں   دل دُکھاتے رہیں          اُن کو کس نے کہا؟ عاشِقانِ رسول

چغلیوں   تہمتوں   ، میں   جو مشغول ہوں     اُن کو کس نے کہا؟ عاشِقانِ رسول

گالیاں   جو بکیں   عیب دریاں   کریں        اُن کو کس نے کہا؟ عاشِقانِ رسول

داڑھیاں   جو مُنڈائیں   کریں   غیبتیں          اُن کو کس نے کہا؟ عاشِقانِ رسول

کاش ! عطاؔر کا طیبہ میں   خاتِمہ              ہو کرو یہ دعا عاشِقانِ رسول

 بخل کی تعریف

یعنی جس چیز کا خرچ کرنا شرعاًیا مروّتاً  ضروری ہو وہاں خرچ نہ کرنا ۔(الحدیقۃ الندیۃ، ج۲، ص۲۷)

 غیبت کی تعریف

کسی (زِندہ یا مُردہ )شخص کے پوشیدہ عیب کو (جس کو وہ دوسروں  کے سامنے ظاہر ہونا ، پسند نہ کرتا ہو )اس کی بُرائی کرنے کے طور پر ذِکر کرنا۔ (بہارِ شریعت، حصّہ ۱۶، ص ۱۷۵)

نوحہ کی تعریف

میت کے اوصاف مبالغہ کے ساتھ(یعنی میت کی بڑھا چڑھاکر تعریف) بیان کر کے آواز سے رونا (بہار شریعت ، ج۱ ص۸۵۴)

 

قلبِ عاشق ہے اب پارہ پارہاَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں 

(اِس کلام میں   بیچ میں   کہیں   کہیں   مصرعے کسی نامعلوم شاعِر کے ہیں  ، کلام نہایت پُر سوز تھا اِس لئے کسی کی فرمائش پر اُسی کلام کی مدد سے اپنے متلاطم جذبات کو الفاظ کے قالب میں   ڈھالنے کی سعی کی ہے)

قلبِ عاشق ہے اب پارہ پارہ               اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

کُلفتِ([1])ہجر و فرقت نے مارا                 اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

تیرے آنے سے دل خوش ہوا تھا         اور ذَوقِ عبادت بڑھا تھا

آہ! اب دل پہ ہے غم کا غَلبہ                  اَلوَداع اَلوَداع آہ! رمضاں

مسجِدوں   میں   بہار آگئی تھی                   جُوق در جُوق آتے نمازی

ہو گیا کم نَمازوں   کا جذبہ                       اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

بزمِ اِفطار سجتی تھی کیسی!                     خوب سَحری کی رونق بھی ہوتی

سب سماں   ہو گیا سُونا سُونا                      اَلوَداع اَلوَداع آہ! رَمضاں

 



[1]     رنج۔تکلیف ۔



Total Pages: 406

Go To