Book Name:Wasail e Bakhshish

اگر دردِ سر ہو، کہیں   کینسر ہو            دلائے گا تم کو شفا مَدنی ماحول

شِفائیں   ملیں  گی، بَلائیں   ٹلیں   گی        یقینا ہے بَرَکت بھرا مَدنی ماحول

گنہگارو آؤ، سِیَہ کارو آؤ                    گناہوں   کو دیگا چھڑا مَدنی ماحول

پِلا کر مئے عشق دیگا بنا یہ                 تمہیں   عاشِقِ مصطَفٰے مَدنی ماحول

اے اسلامی بہنو! تمہارے لئے بھی        سُنو ہے بہت کام کا مَدنی ماحول

تمہیں  سنّتوں  اور پردے کے اَحکام  تمہیں   سنّتوں   اور پردے کے احکام

قیامت تلک یاالٰہی سلامت

رہے تیرے عطارؔ کا مَدنی ماحول

 

آج ہیں   ہر جگہ عاشِقانِ رسول

(۱۸محرم الحرام ۱۴۳۲ھ کو یہ کلام مَوزُوں   کیا گیا)

آج ہیں   ہر جگہ عاشِقانِ رسول                  محوِ نعت و ثنا عاشِقانِ رسول

جشن، میلاد کا سب رہے ہیں   منا                بندگانِ خدا عاشِقانِ رسول

جشنِ میلاد سے عشق ہے  پیار ہے               ہیں   مناتے سدا عاشِقانِ رسول

ماہِ میلاد میں   خوب لہرایئے                       گھر پہ جھنڈا ہرا عاشِقانِ رسول

آمدِ مصطَفٰے مرحبا مرحبا                             سب لگاؤ صدا عاشِقانِ رسول

سیکھنے سنّتیں   ، مسجد آؤ چلیں                      لائے ہیں   قافِلہ عاشِقانِ رسول

یاد رکھنا سبھی چھوڑنا  مت کبھی                  دامنِ مصطَفٰے عاشِقانِ رسول

رحمتِ کبریا تم پہ ہو دائما                           ہے ہماری دعا عاشِقانِ رسول

تم پہ فضلِ خدا، رحمتِ مصطَفٰے                   ہو بروزِ جزا عاشِقانِ رسول

کاش! دنیا میں   تم دو بَفَضلِ خدا                  دیں   کا ڈنکا بجا عاشِقانِ رسول

تم پہ ہو قبر میں   ہر جگہ حشر میں                    سایۂ مصطَفٰے عاشِقانِ رسول

بے نمازی رہیں   کچھ نہ روزے رکھیں             اُن کو کس نے کہا؟ عاشِقانِ رسول

عالموں   پر ہنسیں  ، پَھبتیاں   بھی کَسَیں           اُن کو کس نے کہا؟ عاشِقانِ رسول

 

 



Total Pages: 406

Go To