Book Name:Wasail e Bakhshish

تمہیں   لُطف آ جائے گا زندگی کا                                 قریب آکے دیکھو ذرا مَدنی ماحول

نبی کی مَحَبَّت میں   رونے کا انداز                                چلے آؤ سِکھلائے گا مَدنی ماحول

تُو نرمی کو اپنانا جھگڑے مٹانا                                        رہے گا سدا خوشنما مَدنی ماحول

تُو غصّے ِجھڑکنے سے بچنا وَگرنہ                                    یہ بدنام ہو گا تِرا مَدنی ماحول

اے اسلامی بھائی نہ کرنا لڑائی                                    کہ ہو جائیگا بدنُما مَدنی ماحول

جو کوئی’’ مَجالِس([1])  ‘‘ کا ہوگا وفادار                          اُسی کو ہی راس([2])آئے گا مَدنی ماحول

سَنور جائے گی آخِرت اِنْ شَاءَ اللّٰہ                            تم اپنائے رکّھو سدا مَدنی ماحول

بَہُت سخت پچھتاؤ گے یاد رکّھو                                    نہ عطارؔ تم چھوڑنا مدنی ماحول

 

ترا شکر مولا دیا مَدنی ماحول

(دعوتِ اسلامی کے سنّتوں   بھرے اور نیکیوں   سے لبریز ماحول کو’’ مَدنی ماحول ‘‘ کہاجاتا ہے)

تِرا شکر مولا دیا مَدنی ماحول              نہ چھوٹے کبھی بھی خدا مَدنی ماحول

سلامت رہے یاخدا مَدنی ماحول        بچے بد نظر سے سدا مَدنی ماحول

خدا کے کرم سے خدا کی عطا سے       نہ دشمن سکے گا چھڑا مَدنی ماحول

دعا ہے یہ تجھ سے دل ایسا لگا دے     نہ چھوٹے کبھی بھی خدا مَدنی ماحول

ہمیں   عالموں   اور بزرگوں   کے آداب      سکھاتا ہے ہر دم سدا مَدنی ماحول

ہیں   اسلامی بھائی سبھی بھائی بھائی       ہے بے حد مَحَبَّت بھرا مَدنی ماحول

یقینا مقدر کا وہ ہے سکندر                 جسے خیرسے مل گیا مَدنی ماحول

یہاں   سنّتیں   سیکھنے کو ملیں   گی          دِلائے گا خوفِ خدا مَدنی ماحول

تُو آ بے نَمازی، ہے دیتا نمازی          خدا کرم سے بنا مَدنی ماحول

گر آئے شرابی مٹے ہر خرابی           چڑھائے گاایسا نشہ مَدنی ماحول

 

اگر چور ڈاکو بھی آجائیں   گے تو         سدھر جائیں   گے گر مِلا مَدنی ماحول

اے بیمارِ عِصیاں   تُو آجا یہاں   پر       گناہوں   کی دیگا دوا مَدنی ماحول

 



[1]     یہاں   دعوتِ اسلامی کے مَدنی کاموں   کے مختلف شعبہ جات کی’’ مجالس‘‘ مُراد ہیں  ۔

[2]     موافق ۔



Total Pages: 406

Go To