Book Name:Wasail e Bakhshish

آؤ عشقِ محمد کے پینے کو جام،                          مَدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

مست ہو کر کرو خوب تم مَدنی کام،                   مَدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

زندَگی کا قرینہ ملے گا تمہیں  ،                          مَدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

آؤ دردِ مدینہ ملے گا تمہیں  ،                            مَدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

آؤ سنّت کا فیضان پاؤ گے تم،                           مَدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

 

اِنْ شَاءَ اللّٰہ جنّت میں   جاؤ گے تم،                      مَدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

تم کو تڑپا کے رکھ دے گو دردِ کمر،                      مَدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

پاؤ گے تم سُکوں   ہوگا ٹھنڈا جگر،                        مَدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

رنگ رَلیاں   مَنانے کا چَسکا مِٹے،                        مَدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

رَقص کی مَحفِلوں   کی نُحُوست چھُٹے،                     مَدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

ڈھول باجوں   کو سُننے سے باز آؤ تم،                    مَدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

فلمی گانے نہ ہرگز کبھی گاؤ تم                         مَدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

چھوڑدو چھوڑدو بھائی رِزقِ حرام،                       مَدنی ماحول میں  کرلو تم اعتِکاف

آؤ کرنے لگو گے بَہُت نیک کام،                       مَدنی ماحول میں   کرلو تم اعتِکاف

فضلِ رب سے ہو دیدارِ سلطانِ دیں  ،                  مَدنی ماحول میں   کر لوتم اعتِکاف

شادمانی سے جھومے گا قلبِ حَزیں  ([1])،                مدنی ماحول میں   کر لوتم اعتِکاف

مان بھی جاؤ عطارؔ کی التِجا

مَدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

ہوگا راضی خدا خوش شہِ انبیا،

مدنی ماحول میں   کر لو تم اعتِکاف

 

عطائے حبیبِ خدا  مَدنی ماحول

عطائے حبیبِ خدا مَدنی ماحول                                    ہے فَیضانِ غوث ورضا مَدنی ماحول

بَفَیضانِ  احمد  رضا   اِنْ شَاءَ اللّٰہ                                  یہ پُھولے پھلے گا سدا مَدنی ماحول

اگر سُنّتیں   سیکھنے کا ہے جذبہ                                     تم آجاؤ دیگا سِکھا مَدنی ماحول

تُو داڑھی بڑھا لے عِمامہ سجا لے                                 نہیں  ہے یہ ہرگز بُرا مَدنی ماحول

بُری صحبتوں   سے کَنارہ کَشی کر                                    کے اچّھوں   کے پاس آکے پا مَدنی ماحول

تنزُّل([2])کے گہرے گڑھے میں   تھے اُن کی                    ترقّی کا باعث بنا مَدنی ماحول

 



[1]     غمگین ۔

[2]     ترقی کا ضِد۔کمی۔گٹھاؤ    ۔



Total Pages: 406

Go To