Book Name:Wasail e Bakhshish

 

 

رہیں   بھلائی کی راہوں   میں   گامزن ہر دم

کریں   نہ رُخ مرے پاؤں   گناہ کا یارب

گناہ گار طلبگارِ عَفو و رحمت ہے

                                                           عذاب  سَہنے کا کس میں   ہے حوصَلہ یارب

کرم سے’’ نیکی کی دعوت‘‘ کا خوب جذبہ دے

دوں   دھوم سنّتِ محبوب کی مچا یارب

عطا ہو دعوتِ اسلامی کو قبولِ عام

                                                           اسے شُرُور وفتن سے سدا بچا یارب

میں   پُل صراط بِلا خوف پار کر لوں   گا

ترے کرم کا سہارا جو مل گیا یارب

کہیں   کا آہ! گناہوں   نے اب نہیں   چھوڑا

                                                           عذابِ نار سے عطاؔر کو بچا یارب

 

مِٹا دے ساری خطائیں   مری مٹا یا رب

مِٹا دے ساری خطائیں   مری مِٹا یارب        بنادے مجھ کو الٰہی خُلوص کا پیکر

اندھیری قبر کا دل سے نہیں   نکلتا ڈر           گناہگار ہوں   میں   لائقِ جہنَّم ہوں

بُرائیوں   پہ پَشَیماں   ہوں   رَحم فرمادے        مُحِیط دل پہ ہوا ہائے نفسِ اَمّارہ

رِہائی مجھ کوملے کاش!نفس وشیطاں  سے         گناہ بے عدد اور جُرم بھی ہیں   لاتعداد

میں   کر کے توبہ پلٹ کر گناہ کرتا ہوں          سنوں   نہ فُحش کلامی نہ غیبت وچغلی

کریں   نہ تنگ خیالاتِ بد کبھی ، کردے       بنادے نیک بنا نیک دے بنا یارب

قریب آئے نہ میرے کبھی ریا یارب        کروں   گا کیا جو تُو ناراض ہو گیا یارب

کرم سے بخش دے مجھ کو نہ دے سزا یارب     ہے تیرے قَہر پہ حاوی تری عطا یارب

دِماغ پر مِرے ابلیس چھا گیا یارب            تِرے حبیب کادیتا ہوں   واسِطہ یارب

مُعاف کردے نہ سہ پاؤں   گا  سزا یارب      حقیقی توبہ کا کر دے شَرَف عطا یارب

تری پسند کی باتیں   فَقَط سنا یارب               شُعُور و فکر کو پاکیزگی عطا یارب

 



Total Pages: 406

Go To