Book Name:Wasail e Bakhshish

دوفَقَط اپنی مَحَبَّت، اے شَہَنشاہِ رسالت

[یانبی سلامٌ علیکَ یارسول سلامٌ علیکَ

یاحبیب سلامٌ علیکَ صلوٰۃُ اللّٰہِ علیکَ]

رَحمَۃٌ لِلْعٰلمیں  ہو، اور شفیعُ المُذنِبِیں   ہو

فَضلِ رب سے کیا نہیں   ہو، بعد رب کے بس تمہیں   ہو

[یانبی سلامٌ علیکَ یارسول سلامٌ علیکَ

یاحبیب سلامٌ علیکَ صلوٰۃُ اللّٰہِ علیکَ]

 

تم مدینے میں   بلانا، اپنا جلوہ بھی دکھانا

کلمۂ طیِّب پڑھانا، اپنے قدموں   میں   سلانا

[یانبی سلامٌ علیکَ یارسول سلامٌ علیکَ

یاحبیب سلامٌ علیکَ صلوٰۃُ اللّٰہِ علیکَ]

اے شَہَنْشاہِ مدینہ، عشق کا دیدو خزینہ

ہو مِرا سینہ مدینہ، عرض کرتا ہے کمینہ

[یانبی سلامٌ علیکَ یارسول سلامٌ علیکَ

یاحبیب سلامٌ علیکَ صلوٰۃُ اللّٰہِ علیکَ]

رَحمَۃً لِّلْعٰلَمِینا، ہو عطا ایسا قرینہ

دیکھ کر میٹھا مدینہ، عشق میں   پھٹ جائے سینہ

[یانبی سلامٌ علیکَ یارسول سلامٌ علیکَ

یاحبیب سلامٌ علیکَ صلوٰۃُ اللّٰہِ علیکَ]

نَزْع میں   محبوبِ داور، کاش! دیکھوں   رُوئے انور

دیکھتے ہی جاں   نچھاور، تم پہ کردوں   کاش! سرور

[یانبی سلامٌ علیکَ یارسول سلامٌ علیکَ

یاحبیب سلامٌ علیکَ صلوٰۃُ اللّٰہِ علیکَ]

 

اے مدینے والے آقا، جتنے ہیں   متوالے آقا

سب کے سن لے نالے آقا، سب کو تو بلوا لے آقا

 



Total Pages: 406

Go To