Book Name:Wasail e Bakhshish

مہکے مہکے پیارے پیارے دونوں   غاروں   کو سلام

مَدنی مُنّوں   کا بھی حملہ خوب تھا بوجَہل پر

بدر کے ان دونوں   ننھے جاں   نثاروں   کو سلام

جگمگاتے گنبدِ خضرا پہ ہو رحمت مُدام

مسجدِ نبوی کے نورانی مَناروں   کو سلام

 

منبر و محرابِ جاناں   اور سُنہری جالیاں 

سبز گنبد کے مکیں   کو دونوں   پیاروں   کو سلام

سیِّدی حمزہ کو، اور جُملہ شہیدانِ اُحُد

کو بھی اور سب غازیوں   کو شہسُواروں   کو سلام

جس قدر جنّ وبشر میں   تھے صحابہ شاہ کے

سب کو بھی بیشک خصوصاً چار یاروں   کو سلام

جس جگہ پر آکے سوئے ہیں   صَحابہ دس ہزار

اُس بقیعِ پاک کے سارے مَزاروں   کو سلام

شوقِ دیدارِ مدینہ میں   تڑپتے ہیں   جو ، اُن

بے قراروں   ، دل فِگاروں   ، اشکباروں   کو سلام

غسلِ کعبہ ([1])کا بھی منظر کس قَدَر پُر کیف ہے

جھوم کر کہتا ہے عطارؔؔ ان نظاروں   کو سلام

 

ہومبارَک اہلِ عِصیاں  ، ہوگیابخشش کاساماں 

[یانبی سلامٌ علیکَ یارسول سلامٌ علیکَ

یاحبیب سلامٌ علیکَ صَلَوٰۃُ اللّٰہِ علیکَ ]

ہومبارَک اہلِ عِصیاں  ، ہوگیابخشش کاساماں 

آگئی صبحِ بہاراں  ، ہو گیا گھر گھر چراغاں 

 



[1]     غسل کعبہ عمو ماً یکم ذُوالحجۃِ الحرام کو ہوتا ہے ۔یہ ۱۴۱۴ھ کی حا ضری کا غسلِ کعبہ کے وقت کا مقطع ہے ۔



Total Pages: 406

Go To