Book Name:Wasail e Bakhshish

بھید کیا جانے شہادت کا کوئی

اُن خُدا کے رازداروں   کو سلام

بے بسی میں   بھی حیا باقی رہی

سب حُسینی پردہ داروں   کو سلام

رحمتیں   ہوں   ہر صحابی پر مُدام ([1])

اور خُصُوصًا چار یاروں   کو سلام

بیبیوں   کو عابِدِ بیمار کو

بے کسوں   ، غم کے ماروں   کو سلام

 

ہو گئے قرباں   محمد اور عَون

سیِّدہ زَینب کے پیاروں   کو سلام

کربلا میں   ظلم کے ٹوٹے پہاڑ

جن پہ ان سب دلفِگاروں ([2])  کو سلام

اٰل و اصحابِ نبی کے جس قَدَر

چاہنے والے ہیں   ساروں   کو سلام

یاخدا! اے کاش! جاکر پھر کروں 

کربلا کے سب مزاروں   کو سلام

تین دن کے بھوکے پیاسے آپ کی

یانبی! آنکھوں   کے تاروں   کو سلام

جو حُسینی قافِلے میں   تھے شریک

کہتا ہے عطارؔ ساروں   کو سلام

 



[1]     ہمیشہ  ۔

[2]     زخمی دل، دکھیارے ۔



Total Pages: 406

Go To