Book Name:Wasail e Bakhshish

مال و دولت کی کثرت کا طالب نہیں                         تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودوسلام

اب بلا لو مدینے میں   عطارؔ کو

اپنے قدموں   میں   رکھ لو گنہگار کو

کوئی اس کے سوا آرزو ہی نہیں

تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودوسلام

 

کربلا کے جاں   نثاروں   کوسلام

کربلا کے جاں   نثاروں   کو سلام

فاطِمہ زَہرا کے پیاروں   کو سلام

مصطَفٰے کے ماہ پاروں   کو سلام

نوجوانوں   گُلْ عِذاروں ([1])کو سلام

کربلا تیری بہاروں   کو سلام

جاں   نثاری کے نظاروں   کو سلام

یاحسین ابنِ علی مُشکل کُشا

آپ کے سب جاں  نثاروں   کو سلام

اکبر و اصغر پہ جاں   قربان ہو

میرے دل کے تاجداروں   کو سلام

قاسم و عبّاس پر ہوں   رحمتیں 

کربلا کے شہَسُواروں ([2])کو سلام

 

جس کسی نے کربلا میں   جان دی

ان سبھی ایمانداروں   کو سلام

بھوکی پیاسی بِیبیوں   پر رحمتیں 

بھوکے پیاسیگُلْ عِذاروں   کو سلام

 



[1]     پھول جیسے رخسار والے   ۔

[2]     ماہر گھوڑے سُوار ۔



Total Pages: 406

Go To