Book Name:Wasail e Bakhshish

 

تاجدارِ حرم اے شَہَنشاہِ دیں   تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودو سلام

تاجدارِ حرم اے شَہَنشاہِ دیں                     تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودوسلام

ہو کرم مجھ پہ یا سیِّدَ المرسلیں                       تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودوسلام

دُور رہ کر نہ دم ٹوٹ جائے کہیں                   کاش! طیبہ میں   اے میرے ماہِ مُبیں

دَفن ہونے کو مل جائے دو گز زمیں              تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودوسلام

کوئی حُسنِ عمل پاس میرے نہیں                 پھنس نہ جاؤں   قِیامت میں   مولا کہیں

اے شفیعِ اُمَم لاج رکھنا تمہیں                     تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودوسلام

دونوں   عالم میں   کوئی بھی تم سا نہیں               سب حَسینوں   سے بڑھ کر کے تم ہو حسیں

قاسِم رِزقِ ربُّ العلیٰ ہو تمہیں                    تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودوسلام

فکرِ اُمّت میں   راتوں   کو روتے رہے             عاصِیوں   کے گناہوں   کو دھوتے رہے

تم پہ قربان جاؤں   مِرے مَہ جَبیں  !            تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودوسلام

پھول رَحمت کے ہر دم لٹاتے رہے             یاں   غریبوں   کی بگڑی بناتے رہے

حوضِ کوثر پہ مت بھول جانا کہیں                 تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودوسلام

ظُلم، کُفّار کے ہنس کے سَہتے رہے                پھر بھی ہر آن حق بات کہتے رہے

 

کتنی محنت سے کی تم نے تبلیغِ دیں                   تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودوسلام

موت کے وقت کردو نگاہِ کرم                      کاش اِس شان سے یہ نکل جائے دم

سنگِ درپر تمہارے ہو میری جَبیں  ([1])         تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودوسلام

اب مدینے میں   ہم کو بُلالیجئے                        اور سینہ مدینہ بنا دیجئے

ازپئے غوثِ اعظم امامِ مُبیں                         تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودوسلام

عشق سے تیرے معمور سینہ رہے                 لب پہ ہر دم ’’مدینہ مدینہ‘‘ رہے

بس میں   دیوانہ بن جاؤں   سلطانِ دیں                         تم پہ ہر دم کروڑوں   دُرُودوسلام

دُور ہو جائیں   دنیا کے رنج واَلَم([2])                    ہو عطا اپنا غم دیجئے چشمِ نم

 



[1]     پیشانی ۔

[2]     غم ۔



Total Pages: 406

Go To