Book Name:Wasail e Bakhshish

دو دید کا شربت                             غوثِ پاک

میں   کر لوں   زیارت                       غوثِ پاک

دے دو یہ سعادت                         غوثِ پاک

میں   دیکھ لوں   تُربت                      غوثِ پاک

جب ہومری رِحلت                      غوثِ پاک

دیکھوں   تری صورت                     غوثِ پاک

دو جذبۂ خدمت                            غوثِ پاک

دوں   نیکی کی دعوت                       غوثِ پاک

مرحبا یاغوثِ پاک

مرحبا یاغوثِ پاک

 

’’عرشِ اعظم پہ رب‘‘ والا شعر پڑھنا کیسا؟

 سُوال: یہ شِعر دُرُست ہے یا نہیں  ؟

عرشِ اعظم پہ رب سبز گنبد میں   تم    کیوں   کہوں   میرا کوئی سہارا نہیں 

یہ خَلِش میرے دل کو گوارا نہیں        میں   مدینے سے لیکن بَہُت دُور ہوں 

جواب:اِس شِعر کے ابتدِائی الفاظ ’’ عرشِ اعظم پہ رب ‘‘ عَزَّوَجَلَّ میں   بظاہِر مَعَاذَ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ  عرشِ اعظم پر اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ  کا مکان مانا گیا ہے اور اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ  کیلئے مکان ماننا کُفرِ لُزومی ہے۔ اگر اِس شِعر کی ابتِداء میں   ’’ عرشِ اعظم کارب‘‘ عَزَّوَجَلَّ پڑھیں   تو شعر شرعی گرفت سے نکل جائے گا۔ (کفریہ کلمات کے بارے میں   سوال جواب ص۲۴۲ مکتبۃ المدینہ )

 

سلام

زائرِطیبہ! روضے پہ جاکر، تُو سلام اُن سے رو رو کے کہنا

زائرِطیبہ!روضے پہ جاکر، تُو سلام اُن سے رو رو کے کہنا

میرے غم کا فسانہ سنا کر، تُو سلام اُن سے رو رو کے کہنا

تیری قسمت پہ رشک آرہا ہے تو مدینے کو اب جا رہا ہے

آہ! جاتاہے مجھ کو رُلا کر، تُوسلام اُن سے رو رو کے کہنا

 



Total Pages: 406

Go To