Book Name:Wasail e Bakhshish

اعلیٰ حضرت کا رہوں   میں   باوفا                استِقامت کی دعا درکار ہے

آستانے پر کھڑا ہے اِک گدا                 طالبِ عشقِ شہِ ابرار ہے

مسکرا کر اِک نظر گر دیکھ لو                  میری شامِ غم ابھی گلزار ہے

میرے دل کو شاد فرما دیجئے                  رنج و غم کی قلب پر یلغار ہے

سیِّدی احمدرضا کا واسِطہ                       تیرا منگتا طالبِ دیدار ہے

ہُوں   گناہوں   کے مَرَض سے نیم جاں         دردِ عصیاں   کی دوا درکار ہے

 

ہاتھ پھیلا کر مُرادیں   مانگ لو             سائلو ان کا سخی دربار ہے

اِنْ شَآءَ اللہ  مغفرت   ہو   جائیگی            اے وَلی ! تیری دعا درکار ہے

خوب خدمت سنّتوں   کی میں   کروں       سیِّدی تیری دعا درکار ہے

                          کاش! نوری([1])کے سگوں   میں   ہو شمار               

یہ تمنائے دلِ عطارؔ ہے

توریہ کی تعریف

توریہ یعنی لفظ کےجوظاہرمعنیٰ ہیں وہ غلط ہیں مگراس نےدوسرےمعنیٰ مرادلئےجوصحیح ہیں۔ مثلاً:آپ نےکسی کوکھانےکےلئےکہاوہ بولا:میں نےکھاناکھالیا۔اس کےظاہرمعنیٰ یہ ہیں کہ اس وقت کاکھاناکھالیاہےمگروہ یہ مرادلیتاہےکہ کل کھایاہےیہ بھی جھوٹ میں داخل ہے۔حکم:ایساکرنا بلاحاجت جائزنہیں اورحاجت ہوتوجائزہے۔

(فتاوی عالمگیری، ۵/ ۳۵۲)

 

گیارھویں   شریف کے نعرے

نعرہ                                      جواب

سلطانِ ولایت                                          غوثِ پاک

ولیوں   پہ حکومت                                       غوثِ پاک

شہبازِ خطابت                                           غوثِ پاک

فانوسِ ہدایت                                          غوثِ پاک

سرتاجِ شریعت                                        غوثِ پاک

ہیں   رب کی نعمت                                       غوثِ پاک

اللّٰہ کی رحمت                                           غوثِ پاک

ہیں   باعثِ برکت                                      غوثِ پاک

ہیں   صاحبِ عزّت                                     غوثِ پاک

 



[1]     تاجدارِ اہلِ سنّت ، شہزادۂ اعلیٰ حضرت ،حضور مفتی اعظم ہند ،مولیٰنا مصطَفٰے رضا خان علیہ رحمۃ المنان کا تخلُّص ’’نوریؔ ‘‘ہے۔



Total Pages: 406

Go To