Book Name:Wasail e Bakhshish

مفلس و ناچار و خستہ حال ہوں              مخزنِ جُود و عطا فریاد ہے

چھا گئی دل پر خَزاں   پیارے حُسین!     دے بہارِ جانِفزا فریاد ہے

 

حُبِّ سادات اے خدا دے واسِطہ     اہلِ بیتِ پاک کا فریاد ہے

آفتوں   پر آفتیں   ہیں   المدد                 سیِّد و سردارِ ما فریاد ہے

دین کی خدمت کا جذبہ دیجئے            صدقہ نانا جان کا فریاد ہے

سنّتوں   کی ہر طرف آئے بہار             صدقہ میرے غوث کا فریاد ہے

چل گئی بادِ مخالف اَلغیاث                  اے حُسینِ باوفا فریاد ہے

کاش! ہو جاؤں   مدینے میں   شہید          آپ فرما دیں   دعا فریاد ہے

بخت کی ہیں   جس قدر بھی گتھیاں           ساری سُلجھا دو شہا فریاد ہے

کربلا کی حاضِری ہو پھر نصیب             بختِ خوابیدہ جگا فریاد ہے

حال ہے بے حال شاہِ کربلا

آپ کے عطّارؔ کا فریاد ہے

 تجسس کی تعریف:

مسلمانوں کے عُیوب اور انکی چھپی باتوں کا کھوج لگاناتجسس کہلاتاہے۔ (حدیقہ ندیہ، ج۲، ص۳۰۰)

 

مفتیِ اعظم بڑی سرکار ہے

مفتیِ اعظم بڑی سرکار ہے                    جبکہ ادنیٰ سا گدا عطارؔ ہے

مفتیِ اعظم سے ہم کو پیار ہے                 اِنْ شَآءَ اللہ اپنا   بیڑا   پار   ہے

مفتیِ اعظم رضا کا لاڈلا                        اور محب سیِّدِ ابرار ہے

عالم و مفتی، فقیہِ بے بَدَل                     خوب خوش اَخلاق و باکردار ہے

تاجدارِ اہلِ سنّت المدد                      بندۂ در بے کس و ناچار ہے

تختِ شاہی کیا کروں   میرے لئے            تاجِ عزّت آپ کی پَیزار([1])ہے

 



[1]     جُوتی شریف  ۔



Total Pages: 406

Go To