Book Name:Wasail e Bakhshish

حق پہ مَبنی تھا جس کا ہر فتویٰ                   واہ کیا بات اعلی ٰحضرت کی

اس کی ہستی میں   تھا عمل جَوہر                سنّتِ مصطَفٰے کا وہ پیکر

عالِمِ دین، صاحبِ تقویٰ                      واہ کیا بات اعلی ٰحضرت کی

جس نے دیکھا انہیں   عقیدت سے                   قلب کی آنکھ سے مَحبَّت سے

مرحبا مرحبا پکار اٹّھا                            واہ کیا بات اعلیٰ حضرت کی

سنَّتوں   کو جِلادیا جس نے                      دیں   کا ڈنکا بجادیا جس نے

 

وہ مُجدِّد ہے دین و ملّت کا           واہ کیا بات اعلیٰ حضرت کی

جو ہے اللّٰہ کا ولی بے شک           عاشقِ صادِقِ نبی بے شک

غوثِ اعظم کا جو ہے متوالا        واہ کیا بات اعلیٰ حضرت کی

جس نے اِحقاقِ حق کیا کُھل کر    رَدِّ باطل کیا سدا کُھل کر

جو کسی سے کبھی نہ گھبرایا          واہ کیا بات اعلیٰ حضرت کی

سن لو کِلکِ([1])رضا ہے وہ خنجر       آج بھی جس سے لرزاں   اہلِ شَر

بول بالا ہے اہلِ سنّت کا             واہ کیا بات اعلیٰ حضرت کی

پھر بریلی شریف جاؤں   میں         بَرکتیں   مُرشِدی کی پاؤں   میں

کرلوں   روضے کا خوب نَظّارہ       واہ کیا بات اعلیٰ حضرت کی

مولا بَہرِ ’’حدائقِ بخشش‘‘         بخش عطّارؔ کو بِلا پُرسِش

خُلْد میں   کہتا کہتا جائے گا

واہ کیا بات اعلیٰ حضرت کی

 

شاہِ بطحا کاماہ پارہ ہے، واہ کیابات غوثِ اعظم کی

شاہِ بطحا کاماہ پارہ ہے، واہ کیابات غوثِ اعظم کی

سیِّدہ فاطِمہ کاپیاراہے، واہ کیا بات غوثِ اعظم کی

 



[1]     قلم ۔



Total Pages: 406

Go To