Book Name:Wasail e Bakhshish

 

 

تمہارے دربارکا گداہوں  ، میں   سا ئلِ عشقِ مصطَفٰے ہوں 

کرم پئے شاہِ غوثِ اعظم، امامِ اعظم ابوحنیفہ 

فضول گو ئی کی نکلے عادت ، ہو دوربے جا ہنسی کی خصلت

دُرُود پڑھتا رہوں   میں   ہر دم ، امامِ اعظم  ابوحنیفہ 

بَلا کا پَہرا لگا ہوا ہے، مصیبتوں   میں   گھرا ہوا ہے

ترا مُقَلِّد امامِ اعظم، امامِ اعظم ابوحنیفہ

شہا! عَدو کا ستم ہے پیہم، مدد کو آؤ امامِ اعظم

سوا تمہارے ہے کون ہمدم ، امامِ اعظم ابوحنیفہ

نہ جیتے جی مجھ پہ آئے آفت میں  قبرمیں  بھی رہوں  سلامت

بروزِ محشر بھی رکھنا بے غم، امامِ اعظم ابوحنیفہ

مروں   شہا زیرِ سبز گنبد، ہو مدفن آقا بقیعِ غرقد

کرم  برائے رسولِ اکرم، امامِ اعظم ابوحنیفہ

ہوئی شہا فردِ جُرم عائد، بچا پھنساہے تِرا مقلّد

فِرِشتے لے کے چلے جہنَّم، امامِ اعظم ابوحنیفہ

جگر بھی زخمی ہے دل بھی گھا ئل، ہزار فکریں   ہیں   سو مسائل

دُکھوں   کا عطّارؔ کو دو مرھم، امامِ اعظم ابوحنیفہ

 

مصطَفٰے کا وہ لاڈلا پیارا واہ کیا بات اعلیٰ حضرت کی

مصطَفٰے کا وہ لاڈلا پیارا                            واہ کیا بات اعلیٰ حضرت کی

غوث اعظم کی آنکھ کا تارا                    واہ کیا بات اعلیٰ حضرت کی

سُنّیوں   کے دلوں   میں   جس نے تھی                  شمعِ عشقِ رسول روشن کی

وہ حبیبِ خدا کا دیوانہ                          واہ کیا بات اعلیٰ حضرت کی

اللّٰہ اللّٰہ  تَبَحُّرِعِلمی([1])                          اب بھی باقی ہے خدمتِ قَلمی

اہلِ سنّت کا ہے جو سرمایہ                      واہ کیا بات اعلیٰ حضرت کی

علم و عِرفاں   کا جو کہ ساگَر([2])تھا               خیر سے حافِظہ قَوی تر تھا

 



[1]     نہایت وسعتِ علمی     ۔

[2]     سمندر ۔



Total Pages: 406

Go To