Book Name:Wasail e Bakhshish

مرشِد! مجھے سنّت کا بھی پابند بناؤ

عطّارؔ  جہنَّم سے بَہُت خوف زدہ ہے

یاغوث! اِسے دامنِ رَحمت میں   چھپاؤ

غیرت کی تعریف

کسی شخص کے پاس نعمت دیکھ کر اس لئے زوال (یعنی ضائع ہونے) کی تمنا کہ وہ نعمت دنیا آخرت  میں اُس شخص کیلئے نقصان دِہ اور گناہ کاباعث ہو۔              (طریقہ محمدیہ ، ج۱ ، ص۶۱۱)

 

تِرے در سے ہے منگتوں   کا گزارا یامحمدشاہ ([1])

تِرے در سے ہے منگتوں   کا گزارا یامحمدشاہ

یہ سُن کر میں   نے بھی دامن پَسارا یامحمدشاہ

مِری قسمت کا چمکا دو ستارہ یامحمدشاہ

دکھا دو اپنا چہرہ پیارا پیارا یامحمدشاہ

گناہوں   کے مَرَض نے کردیا ہے نیم جاں   مجھ کو

تمہیں   آکر کرو اب کوئی چارہ یامحمدشاہ

غمِ شاہِ مدینہ مجھ کو تم ایسا عطا کردو

جگر ٹکڑے ہو دِل بھی پارہ پارہ یامحمدشاہ

ہوئی جاتی ہے اوجڑ اب مِری اُمّید کی کھیتی

بھرن([2]) برسا دو رحمت کی خدارا یامحمدشاہ

مِرے دولہا مِرے اجڑے گلستاں   میں   بہار آئے

خَزاں   کا رُخ پھرادو اب خدارا یامحمدشاہ

 

مدینے کا بنا دو ایسا دیوانہ مجھے دولھا

پھروں   دیوانگی میں   مارا مارا یامحمدشاہ

گرجتے بادلوں   کا شور چلتی آندھیوں   کا زور

لرزتا ہے کلیجا دو سہارا یامحمدشاہ

مِری کشتی بھنور میں   پھنس گئی ہے ہائے بربادی

 



[1]     واضح رہے کہ سابقہ صفحات میں   یہ کلام کچھ تغیّر کے ساتھ سرکارِ بغداد،حضورِ غوثِ پاک رحمۃُ اللّٰہ تعالٰی علیہ کی شان میں   عرض کیا گیا ہے۔ اُمّید ہے کہ ضروری تفریق کے ساتھ دونوں   کلام علیٰحدہ علیٰحدہ ہونے میں   قارئین کو سہولت رہے گی۔                    ۔

[2]     بارش ۔



Total Pages: 406

Go To