Book Name:Wasail e Bakhshish

 

ہلاکت خیز طُغیانی ہو یا ہوں   موجیں   طوفانی

نہ ڈوبے اپنا بیڑا ناخدا صِدّیقِ اکبر ہیں 

بھٹک سکتے نہیں   ہم اپنی منزل ٹھوکروں   میں   ہے

نبی کا ہے کرم اور رہنما صدّیقِ اکبر ہیں 

گناہوں   کے مرض نے نیم جاں   ہے کر دیا مجھ کو

طبیب اب بس مرے تو آپ یاصدّیقِ اکبر ہیں 

نہ گھبراؤ گنہگارو تمہارے حشر میں   حامی

محبِّ شافِعِ روزِ جزا صِدّیقِ اکبر ہیں 

نہ ڈر عطارؔ آفت سے خدا کی خاص رحمت سے

نبی والی ترے، مُشکلکُشا صدّیقِ اکبر ہیں 

 

میں   ہوں   سائل میں   ہوں   منگتا یاخواجہ مری جھولی بھردو

میں   ہوں   سائل میں   ہوں   منگتا        یاخواجہ مِری جھولی بھردو

ہاتھ بڑھا کر ڈال دو ٹکڑا                  یاخواجہ مِری جھولی بھردو

جو بھی سائل آجاتا ہے                  من کی مُرادیں   پا جاتا ہے

میں   نے بھی دامن ہے پَسارا            یاخواجہ مِری جھولی بھردو

سلطانِ کونَین کا صَدقہ                   مولیٰ علی حَسنَین کا صدقہ

صدقہ خاتونِ جنَّت کا                     یاخواجہ مِری جھولی بھردو

مجھ کو عشقِ رسول عطا ہو                خواجہ نَظرِ کرم سے بنادو

شاہِ مدینہ کا دیوانہ                          یاخواجہ مِری جھولی بھردو

رب کی عِبادت کی دُشواری             اور گناہوں   کی بیماری

دونوں   آفتیں   دُور ہوں   خواجہ         یاخواجہ مِری جھولی بھردو

دے دو تم عطارؔ کو خواجہ

سنّت کی خدمت کا جذبہ

 



Total Pages: 406

Go To