Book Name:Wasail e Bakhshish

موت آئے مجھے مدینے میں                کردو حق سے دعا ضِیاءُ الدین

مجھ کو دیدو بقیعِ غَرقَد میں                     اپنے قدموں   میں   جا ضِیاءُ الدین

حشر میں   دیکھ کر پکاروں   گا                  مرحبا مرحبا ضِیاءُ الدین

مصطَفٰے کا پڑوس جنّت میں                    مجھ کو حق سے دلا ضِیاءُ الدین

بے عمل ہی سہی مگر عطارؔ

کس کا ہے؟ آپکا ضِیاءُ الدین

 

’’ضِیا پیر و مرشِد‘‘ مرے رہنما ہیں   

ضِیاء پیر و مرشِد مرے رہنما ہیں            سُرورِ دل و جاں   مِرے دِلرُبا ہیں

کلی ہیں   گلستانِ غوثُ الوَرٰی کی           یہ باغِ رضا کے گُلِ خوشنما ہیں

شریعت طریقت ہو یا معرِفت ہو         یہ حق ہے حقیقت میں   حق آشنا ہیں

سہارا ہیں   بے کس کا، د کھیوں   کے والی       سخا کے ہیں   مَخزن تو کانِ عطا ہیں

خد ا کی مَحَبَّتسے سرشار ہیں   وہ         دل و جان سے مصطَفٰے پر فدا ہیں

مِلا سبز گنبد کا قسمت سے سایہ             دِیارِ محمد میں   جلوہ نما ہیں

بلالو مجھے اپنے قدموں   میں   اب تو        یہ ایّامِ فُرقَت بڑے جانگُزا ہیں

مجھے رُوئے زیبا ذرا پھر دکھا دو             زیارت کے لمحے بڑے جانفِزا ہیں

تصوُّر جماؤں   تو موجود پاؤں                 کروں   بند آنکھیں   تو جلوہ نُما ہیں

نہ کیوں   اہلِ سنّت کریں   ناز ان پر        کہ وہ نائبِ غوث و احمدرضا ہیں

مُنَوَّر کریں   قلبِ عطارؔ کو بھی

شہا آپ دینِ مُبیں   کی ضیا ہیں

 

یقینا مَنبعِ خوفِ خدا صِدّیقِ اکبر ہیں 

یقینا مَنبعِ خوفِ خدا صِدّیقِ اکبر ہیں 

حقیقی عاشقِ خیرُالورٰی صدّیقِ اکبر ہیں 

 



Total Pages: 406

Go To