Book Name:Wasail e Bakhshish

آہ! ہم سخت گنہگار ہیں   غوثِ اعظم

اپنے عطّارؔ کو چُمکار کے دیجے ٹکڑا

در پہ حاضِر ہوئے عطارؔ ہیں   غوثِ اعظم

 

عا شقِ مصطَفٰے ضیا ءُ الد ین

عاشقِ مصطَفٰے ضِیاءُ الدین                         زاہِد و پارسا ضِیاءُ الدین

دلکش و دلکشا ضِیاء الدین                         میرے دل کی ضِیا، ضِیاءُ الدین

تم کو قطبِ مدینہ یامرشد!                        عُلَما نے کہا ضِیاءُ الدین

یہ شرف کم نہیں   ہے میرے لئے            ہوں   مرید آپکا ضِیاءُ الدین

مجھ کو اپنا بناؤ دیوانہ                                 واسِطہ غوث کا ضِیاءُ الدین

چشمِ رحمت بَسُوئے مَن([1])مُرشِد               از طفیلِ رضا ضِیاءُ الدین

ایسا کردے کرم رہیں   یارب!                  مجھ سے راضی سدا ضِیاءُ الدین

کیسے بھٹکوں   گا میرے ہیں   میرے                  رہبر و رہنما ضِیاءُ الدین

ایک مدت سے آنکھ پیاسی ہے                  اپنا جلوہ دکھا ضِیاءُ الدین

مرضِ عصیاں   سے نیم جاں   ہوں   میں                 مجھ کو دیدو شِفا ضِیاءُ الدین

چشمِ تر اور قلبِ مُضطَر دو                         صدقہ حسنین کا ضِیاءُ الدین

میری سب مشکلیں   ہوں   حل مُرشِد                میرے مشکل کُشا ضِیاءُ الدین

 

پون سو سال تک مدینے میں             تم نے بانٹی ضِیا، ضِیاءُ الدین

جامِ عشقِ نبی پِلا کے مجھے                   مست وبے خود بنا ضِیاءُ الدین([2])

میرے دشمن ہیں   خون کے پیاسے            مجھ کو ان سے بچا ضِیاءُ الدین

آہ! طوفاں   میں   ہے گِھری نیّا              اے مرے ناخُدا ضِیاءُ الدین

 



[1]     بَسُوئے مَن یعنی میری طرف

[2]     :یہ مصرع ’’مفتش‘‘ نے موزوں   کیا۔



Total Pages: 406

Go To