Book Name:Wasail e Bakhshish

شہا نفسِ اَماّرہ مَغلوب ہو اب                      ہو شیطان کا دُور شَر غوثِ اعظم

ہے عصیاں   کے بیمار کا دم لبوں   پر                 خدارا لو جلدی خبر غوثِ اعظم

تمہیں   میرے حالات کی سب خبر ہے              پریشاں   ہوں   میں   کس قدر غوثِ اعظم

شہا! کاش قُفلِ مدینہ لگا لوں                           زَباں   پر بھی اور آنکھ پر غوثِ اعظم

بیاں   سن کے توبہ گنہگار کر لیں                      زباں   میں   وہ دیدو اَثر غوثِ اعظم

میں   بغداد کا کوئی سگ ہوتا اور کاش!                مجھے رکھتے تم باندھ کر غوثِ اعظم

شہیدِ مدینہ ہو عطارِؔ عاصی

مُراد اس کی یہ آئے بَر غوثِ اعظم

 

مَظہرِ عظمتِ غَفّار ہیں   غوثِ اعظم

مَظْہَرِ([1])عظمتِ غفّار ہیں   غوثِ اعظم

مُظْہَرِ([2]) رِفعتِ جبّار ہیں   غوثِ اعظم

واقفِ حکمت و اَسرار ہیں   غوثِ اعظم

دل کے بھیدوں   سے خبردار ہیں   غوثِ اعظم

نائبِ احمدِ مختار ہیں   غوثِ اعظم

اور سب ولیوں   کے سردار ہیں   غوثِ اعظم

گر فَقَط آپ کے اَخیار ہیں   غوثِ اعظم

وہ کہاں   جا ئیں   جو بدکار ہیں   غوثِ اعظم

میرے مرشِد مِری سرکار ہیں   غوثِ اعظم

میرے رہبر مرے غمخوار ہیں   غوثِ اعظم

نہ مخالف فَقَط اغیار ہیں   غوثِ اعظم

دوست بھی دے رہے آزار ہیں   غوثِ اعظم

 

حشر تک گائیں   گے ہم گیت تمہارے مرشد

 



[1]     جائے ظہور۔ظاہر ہونے کی جگہ   

[2]     اظہار دِہِندہ۔اظہار کرنے والا



Total Pages: 406

Go To